ہمیں سیاست کو پیری مریدی سے الگ کرنا ہو گا،بلاول بھٹو
31 مارچ 2018 (19:25) 2018-03-31

سانگھڑ : پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ (ن) لیگ 18ویں ترمیم پر حملے کر رہی ہے، جو اختیارات صوبوں کو دیئے گئے وہ واپس لینے کی کوشش کی جا رہی ہے، مسلم لیگ کے مردہ گھوڑے کو زندہ کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے، پیپلز پارٹی بغیر کسی از خود نوٹس کے پچھلے 10برس سے صاف پانی کے پراجیکٹ پر کام کر رہی ہے،ہم نے تھر میں 340کلو میٹر طویل پانی کی پائپ لائن کا افتتاح کیا ،ارسا سندھ کو اس کے حصہ کا پانی نہیں دے رہاسندھ کو پانی کےلئے ترسایا جا رہا ہے، (ن) لیگ کو بی آئی ایس پی پروگرام اس لئے پسند نہیں کیونکہ یہ بے نظیر بھٹو کے نام پر ہے، خواتین کے کارڈ بند کئے جارہے ہیں، ہمیں سیاست کو پیری مریدی سے الگ کرنا ہو گا، سانگھڑ کو فنکشنل لیگ نے تباہ کیا،50سال یہاں پر حکومت کرنے کے باوجود سندھ کو پینے کے پانی کے ساتھ زراعت کےلئے بھی پانی کی کمی کا سامنارہا۔ہفتہ کو سانگھڑ میں میٹھے پانی کے منصوبے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ تھر میں 340کلو میٹر طویل پانی کی پائپ لائن کا افتتاح کیا ہے.

پہلے لوگ پیاس بجھانے کےلئے بارش کی دعائیں کرتے رہتے تھے، ہم پچھلے 5برس سے عوام کے مسائل حل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، عوام کی بنیادی مسائل میں تعلیم، صحت اور پانی وغیرہ شامل ہیں، ہم نے تعلیمی ادارے بنائے اور وظائف دیئے، ہم نے بچوں کےلئے سب سے بڑاہسپتال بنایا اور اعلیٰ مشینیں لگائیں،اس علاج پر لاکھوں روپے خرچ ہوتے تھے، ہم نے سندھ کے دیگر اضلاع میں عالمی معیار کے 5بڑے ہسپتال بنائے، جہاں عوام کا مفت علاج ہوتا ہے، ہم نے چھوٹے شہروں کو نظرانداز نہیں کیا، حکمرانوں کی ملک دشمن پالیسیوں کے باعث امیر امیر تر ہوتا جا رہا ہے اور غریب غریب تر ہوتا جا رہا ہے، ہم نے 6لاکھ خاندانوں کو غربت سے نکالا، اس پوگرام کو ہم مزید پھیلا رہے ہیں، ہم صاف پانی کے پراجیکٹ پر پچھلے دس برس سے کام کر رہے ہیں اور یہ کسی از خود نوٹس کے باعث نہیں ہے، ارسا سندھ کو اس کے حصہ کا پانی نہیں دے رہا، سندھ کو پانی کےلئے ترسایا جا رہا ہے، پانی بچانے کےلئے ہم نے نہروں اور کھالوں کو پکا کیا اور ہزاروں ایکڑ بنجرزمینوں کو آباد کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے 240کلو میٹر لمبی پانی کی پائپ لائن بچھائی، ہم چاہتے ہیں کہ نہ تو آپ پیاسے رہیں اور نہ ہی آپ کے جانور، ہمیں عوام کے مسائل کا علم ہے.

ہم عوامی سیاست کرتے ہیں، پیپلز پارٹی نے سب سے زیادہ کام کیا، ہر صوبے میں آپ کو پی پی ہی نظر آئے گی، (ن) لیگ کی سوچ عوام مخالف ہے، یہ لوگ مسلم لیگ کے مردہ گھوڑے کو زندہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، سانگھڑ کو تباہ کرنے والی فنکشنل لیگ ہے انہوں نے 50سال یہاں پر حکومت کی، سندھ کو پینے کے پانی کے ساتھ زراعت کےلئے بھی پانی کی کمی کا سامنا ہے، فنکشنل لیگ نے یہاں کے بچوں کو بھوکا پیاسا رکھا،ہم نے سانگھڑ سے ملک کے دیگر حصوں تک روڈ بنائے، سانگھڑ میں یونیورسٹی بنائی۔ چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے کہا کہ میرے نان ذوالفقار علی بھٹو پر سانگھڑ میں حملہ ہوا مگر وہ ڈرے نہیں، ہم نے سانگھڑ کے عوام سے رشتہ نہیں توڑا، میں بھی وعدہ کرتا ہوں کہ آپ کو نہیں چھوڑوں گا، ہم نے یہاں پر عالمی معیار کا ہسپتال بنانا ہے جہاں مفت علاج ہو گا، عوام کو اس سے غرض نہیں کہ کس کو کیوں نکالا، عوام روٹی، کپڑا، مکان اور روشن مستقبل ہے، یہ روشن مستقبل پیپلز پارٹی دلا سکتی ہے، وفاق میں جب ہمیں حکومتی ملی تو ہمیں بے شمار مسائل کا سامنا کرنا پڑا، ہم نے وسائل اور طاقت کو نچلی سطح تک منتقل کیا، صوبائی خود مختاری دی، (ن) لیگ 18ویں ترمیم پر حملے کر رہی ہے.

جو اختیارات صوبوں کو دیئے گئے وہ واپس لینے کی کوشش کی جا رہی ہے، انہوں نے 5سال این ایف سی ایوارڈ نہیں دیا، ہم ایسا نہیں ہونے دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام شروع کیا، (ن) لیگ کو یہ پروگرام اس لئے پسند نہیں کیونکہ یہ بے نظیر بھٹو کے نام پر ہے، مسلم لیگ (ن) والے خواتین کے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام والے کارڈ بند کر رہے ہیں، کیا یہ درست ہے، ہمارے ہاں بچوں کی اموات دنیا کے کئی ممالک سے زیادہ ہے، حکمرانوں کے پاس امیروں کے قرضے معاف کرنے کی طاقت ہے مگر غریبوں کےلئے دو وقت کی روٹی کے پیسے نہیں ہیں، یہ میٹرو پراجیکٹ پر اربوں روپے لگا سکتے ہیں مگر غریب خاندانوں کےلئے ان کے پاس وقت نہیں اور نہ ہی پیسہ ہے، ان ظالم حکمرانوں نے غربت نہیں بلکہ غریب مٹانے کا فیصلہ کیا ہوا ہے، ہمیں سیاست کو پیری مریدی سے الگ کرنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا منشور کسان دوست منشور ہے، میں مانتا ہوں کہ سب کچھ ٹھیک نہیں ابھی بہت کام باقی ہے۔


ای پیپر