اپوزیشن رہنما چیئرمین سینٹ کے فیصلے پر ڈٹ گئے
31 جولائی 2019 (00:32) 2019-07-31

اسلام آباد: اپوزیشن رہنماﺅں نے حکومت کیخلاف خطرے کی گھنٹی بجاتے ہوئے چیئرمین سینٹ کیلئے اپنی وفاداریاں تبدیل نہ کرنے کا یقین دلا دیا ،جس کے بعد یہ واضح ہونے لگا کہ ہارس ٹریڈنگ نہیں ہو سکے گی ۔

تفصیلات کے مطابق اپوزیشن رہنماﺅں نے اہم ترین عشائیہ سے خطاب کرتے ہوئے تمام اراکین کو تلقین کی کہ اپنی وفاداریاں تبدیل نہ کریں ،انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ آپ کو ڈرایا ،دھمکایا اور خریدا بھی جا سکتا ہے ،

اس موقع پر بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ مجھے پتا ہے، دباو¿ ہوتا ہے لیکن آپ سب جمہوریت کے ساتھ کھڑے رہیں، سینیٹ میں ہم حکومت کا مقابلہ کریں گے، قانون سازی بھی کریں گے اور قانون سازی کرکے قومی اسمبلی والوں کو احساس بھی دلوائیں گے،بلاول نے کہا کہ پارلیمان کا وقار قومی اسمبلی میں نظر نہیں آتا، سینیٹ میں پارلیمان کا وقار بحال کریں گے اور حاصل بزنجو کو چیئرمین سینیٹ منتخب کروائیں گے۔

ذرائع کے مطابق پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر میاں شہباز شریف کا اپنے خطاب میں کہنا تھا کہ چیئرمین سینیٹ کو ہٹانے سے متعلق اپوزیشن اکابرین کے فیصلے کو سراہتا ہوں۔ حاصل بزنجو کو چیئرمین نامزد کرکے ایک بار پھر چھوٹے صوبے کو موقع دیا جا رہا ہے۔ حاصل بزنجو سے متعلق فیصلہ سے صوبے کے درمیاں ہم آہنگی بڑھے گی۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ سینیٹ میں اپوزیشن کی بھاری اکثریت ہے۔ اپوزیشن جماعتوں کی قیادت نے اپنے ارکان پر اعتماد کرکے چیئرمین کو تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ ارکان کا جمہوری حق ہے کہ وہ کس کو چیئرمین نامزد کرنا چاہتے ہیں،مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ تمام ارکان سے توقع ہے کہ اعتماد پر پورا اتریں گے۔ وفاداری اور اعتماد ہمارے ایمان کا حصہ ہے، تمام ارکان پر اعتماد کرکے چیئرمین سینیٹ کو ہٹانے کا بڑا فیصلہ کیا ہے۔


ای پیپر