Source : File Photo

فواد چوہدری نے مولانا فضل الرحمن کو مفید مشورہ دے ڈالا
31 جولائی 2018 (20:40) 2018-07-31

لاہور:پاکستان تحریک انصاف کے نو منتخب امیدوار فواد چوہدری کا الیکشن میں جیت کے بعد ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ہمارے مخالفین اس وقت صدمے کی حالت میں ہیں اور انہیں ٹی وی پر بیٹھ کر بیان دینے کی بجائے گھر میں آرام کرنا چاہئیے۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ مخالفین ایک بات طے کر لیں کہ یا تو عمران خان طالبان خان ہیں یہاں پر امریکہ کے دوست ہیں کیونکہ دنوں اکھٹے تو نہیں ہو سکتے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی اور ن لیگ تو قومی پارٹیاں ہیں اور ان کے کچھ اعتراضات ہیں تو ہم ان کے اعتراضات دور کریں گے۔اور جہاں تک بات مولانا فضل الرحمن یا ان کے اتحادیوں کی تو ان کو پورے پاکستان میں 12لاکھ ووٹ ملے ہیں۔میرے خیال سے ان کو اپنی سیاست کا دوبارہ سے آغاز کرنا چاہئیے۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمان کو چاہئے کہ وہ کونسلر کا الیکشن لڑکر اپنے سیاسی کیرئیر کا آغاز دوبارہ سے کریں۔انہوں نے کہا کہ ہم نے تو ان کو کہا کہ دوبارہ سے الیکشن لڑ لیں لیکن اس کے بعد مولانا فضل الرحمن کو چپ ہی لگ گئی ہے۔یاد رہے الیکشن 2018 میں پاکستان تحریک انصاف نے واضح برتری حاصل کی ہے۔لیکن کئی سیاسی جماعتوں نے الیکشن کو دھاندلی زدہ قرار دے دیا ہے اور کہا ہے کہ ا س الیکشن میں عمران خان کو جتوانے کی کوشش کی گئی ہے۔گزشتہ روز آل پارٹی کانفرس بھی بلائی گئی۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اے پی سی میں دس سیاسی جماعتوں نے الیکشن نتائج مسترد کرکے الیکشن کمیشن پر عدم اعتماد کا اظہار کیا۔ جب کہ دوسری طرف پاکستان تحریک انصاف مرکز کے علاوہ پنجاب میں بھی حکومت بنانے کے لیے کوشاں ہے۔ قومی اسمبلی کے دو اور صوبائی اسمبلی کے مزید 6 آزاد اراکین نے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کر دیا۔ پیر کوتحریک انصاف کے مرکزی میڈیا ڈیپارٹمنٹ سے جاری بیان کے مطابقپنجاب اسمبلی کے مزید آزاد اراکین نے چیئرمین پاکستان تحریک انصاف سے بنی گالہ میں ملاقات میں شمولیت کا اعلان کیا، ان میں نو منتخب رکن قومی اسمبلیاور صوبائی اسمبلی ثنا اللہ مستی خیل، سعید اکبر نوانی اور امیر محمد خان جن کا تعلق بھکر سے ہے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کیا۔


ای پیپر