Actual cost, lockdown, WHO, pandemic, NCOC
31 دسمبر 2020 (11:37) 2020-12-31

آئی ایم ایف نے اس سال عالمی سطح پر وبائی امراض پر اخراجات کا تخمینہ 28 ٹریلین ڈالر لگایا ہے، جبکہ لگاتار لاک ڈاؤن کی وجہ سے معاشی سرگرمیوں میں کمی سے معیشتوں میں 33 فیصد تک کمی واقع ہوئی ہے۔ کاروبار اور تجارت پر وبائی امراض کے غیر معمولی اثرات اگرچہ دستاویزی شکل میں ہیں۔ تاہم، یہ مطالعات ایک زیادہ اہم نقصان کو نظر انداز کرتے ہیں، جو انسانی زندگیوں کا ہے۔ بزرگوں پر تنہائی، گھروں تک محدود رہنے والوں کے لئے ذہنی صحت کے مسائل، خودکشیوں اور بچپن اور تعلیم کے لازمی پہلوؤں میں بڑی اور سنگین تبدیلیاں گزشتہ سال کے المناک انسانی نقصانات میں شامل ہیں۔دنیا بھر میں انفیکشن کی شرح میں اضافے کا براہ راست اثر معاشی نمو پر پڑا ہے۔ ٹیکنالوجی کی ترقی کے باعث حیرت انگیز طور پر تیز سٹاک مارکیٹ کے باوجود، انسانیت اس کی زد میں ہے۔

ہفتہ کی شام، برطانیہ نے آج تک کے اپنے سب سے زیادہ سخت لاک ڈاؤن کا اعلان کیا، جس کی وجہ سے پہلے ہی مشکلات کا شکار عوام، جن کی سکت پہلے ہی کووڈ۔19 کے مضر اثرات کے باعث ختم ہو چکی ہے، شدید پریشان ہیں۔ یہ صورتحال بیشتر یورپی ممالک میں موجود ہے، بین الاقوامی سطح پر بھی ویکسین کی بہت زیادہ خبروں نے لاک ڈاؤن کے بے نتیجہ اور مسلسل مسائل کو کم کرنے کے لئے بہت کم کام کیا ہے۔ آمرانہ حکومتوں میں جیسا کہ سرکاری معاملات کو سربستہ راز رکھا جاتا تھا اور عوام کی معلومات تک رسائی محدود کرنے کی کوشش کی جاتی تھی، یہی صورت حالات من مانے لاک ڈاؤن کے دوران محسوس کی گئی ہے، جو اکثر عوامی مشاورت یا پارلیمانی اور جمہوری بحث کے بغیر عائد کیا جاتا ہے۔

کورونا کے مریضوں کی بڑی تعداد کی صحت یابی کے باوجود، یہ خوفناک حقیقت ہے کہ متاثرہ افراد میں سے بہت سے افراد علامتی طور پر کچھ یا کوئی علامت ظاہر نہیں کرتے ہیں جو وبا کے متعلق اعداد و شمار خے حوالے سے بذات خود تشویشناک صورت حال ہے۔ انفیکشن کی تیزی سے بڑھنے کی اطلاعات اور اس سے ہونے والے نقصانات، حکومتوں کو بڑے پیمانے پر ہونے والی نقل و حرکت اور اکٹھا ہونے پر عائد پابندیوں کو سخت تر کرنے پر مجبور کرتی ہیں۔

ان اقدامات کے اثرات بہت سنگین ہیں۔ 

کرونا وائرس کے باعث قرنطینہ اختیار کرنے والے تقریباً نصف افراد نے تشویش، تناؤ یا تنہائی کے نتیجے میں منفی ذہنی صحت کے اثرات کی اطلاع دی ہے، ان لوگوں کے مقابلے میں جو اس پر یقین نہیں رکھتے۔ وائرس کے معاشی اثرات کی وجہ سے پیدا ہونے والے تناؤ اور پریشانی نے عوام میں ذہنی صحت کے مسائل کو بھی بڑھاوا دیا ہے۔ غیر یقینی صورتحال، دائمی تناؤ اور معاشی مشکلات کمزور آبادی میں افسردگی، اضطراب، مادے کی زیادتی اور دیگر نفسیاتی عوارض کی نشوونما اور آبادی میں اضافے کا باعث بنی ہیں، جن میں پہلے سے موجود نفسیاتی عارضے والے افراد اور ایسے افراد شامل ہیں جو کووڈ۔19 کی بلد شرح والے علاقوں میں رہتے ہیں۔

امریکہ میں، جہاں وائرس کے حوالے سے حالات بدترین ہیں، واشنگٹن پوسٹ نے حال ہی میں رپورٹ شائع کی ہے کہ وبائی مرض کے دوران اوسطاً چار میں سے ایک نوجوان خود کشی کا مرتکب ہو چکا ہے۔ اگرچہ خودکشی کی وارداتیں پچھلے برسوں کے مقابلے میں اتنی زیادہ نہیں، لیکن دیگر پریشان کن علامات بھی ہیں، جیسے بندوق کی فروخت میں تیزی سے اضافہ (خود کشیوں کی سب سے زیادہ کامیاب وارداتیں بندوق کے استعمال سے ہی کی جاتی ہیں) اور نسلی اقلیتی گروہ وبائی مرض کے باعث غیر متناسب اضطراب اور پریشانی سے سب سے زیادہ متاثر ہوائے ہیں۔

جم اور کھیلوں کی سہولیات کی بندش کا دماغی اور جسمانی صحت پر بھی خاص اثر پڑا ہے۔ بندش کے نتائج کا جائزہ لینے کے لئے خاطر خواہ مطالعات کئے گئے ہیں اور سروے کے نتائج کے مطابق 54 فیصد افراد نے ذہنی صحت اور تندرستی پر منفی اثرات کی اطلاع دی ہے۔ ایسے بہت سے کھیل جو سماجی دوری برقرار رکھتے ہوئے اور بار بار ہاتھ دھونے ایسی پابندیوں پر عمل کرتے ہوئے کھیلے نہیں جا سکتے، انہیں بند کرنے پر مجبور کیا گیا ہے۔ جسمانی صحت پر اس کے اثرات ریکارڈ نہیں کئے گئے، تاہم مارچ کے بعد اس میں OHCAs (ہسپتال سے باہر کارڈیک گرفت) اور اس کے نتیجے میں ہونے والی اموات میں اضافے پر کوئی شک نہیں ہے۔

اس حقیقت کو تجربات سے تقویت ملی ہے کہ 2019 اور 2020 کے درمیان سینے کے امراض کے باعث اموات کے مجموعی واقعات میں فرق اور کووڈ۔19 کا شکار 1,00,000 باشندوں کے واقعات کے مابین ایک مضبوط اور شماریاتی لحاظ سے اہم باہمی تعلق ہے۔ لاک ڈاؤن کی نئی تازہ مثالوں کے پیش نظر، بڑھتے ہوئے موٹاپا کے اثرات بھی نوٹ کئے گئے ہیں، اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ وائرس عوامی صحت پر کہیں زیادہ طویل مدتی اثرات مرتب کرے گا۔ چونکہ بزرگ تنہائی کے اثرات برداشت کر رہے ہیں، نوجوان اور بچے بھی بچپن کی کھیل کود اور تعلیم کے اہم پہلوؤں سے محروم ہو گئے ہیں۔

یونیسکو کے مطابق، وبائی بیماری کے باعث سکولوں اور اعلیٰ تعلیمی اداروں کی بندش سے عالمی سطح پر مجموعی طور پر 1.725 بلین طلبا متاثر ہوئے ہیں۔ یہ سمجھا جا سکتا ہے کہ 192 ممالک نے ملک گیر بندش کا نفاذ کیا ہے، جس سے دنیا کی طلبا کی آبادی کا 99 فیصد متاثر ہوا ہے۔ صرف نصاب ہی محدود نہیں رہا، امتحانات کے نتائج کو اوسط کی بنیاد پر مرتب، کمرہ جماعت میں باقاعدہ حاضری کے ساتھ ہونے والی تعلیمی سرگرمیوں اور ٹیوشن کی جگہ فاصلاتی تعلیم نے لے لی ہے۔ محروم طبقات سے تعلق رکھنے والے بچوں کے لئے، سکولوں نے چھٹیاں دے کر گھر رہنے کی پالیسی ترتیب دی ہے، ایسے میں ترقی کی منازل کیوں کر طے کی جا سکیں گی۔

گھر سے سیکھنے تک محدود، بہت سارے طلبا نے اپنی تعلیم کو شدید طور پر درہم برہم کر دیا ہے اور کچھ معاملات میں یہ کام مکمل طور پر بند ہے۔ سب سے اہم سیکھنے کا انداز جس میں طلبا لیکچر سننے یا تجربات دیکھتے اور جسمانی سرگرمیاں کرتے ہیں، سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے۔ صرف وقت ہی یہ بتائے گا کہ انسانوں کے باہمی میل ملاپ اور گروپ سرگرمی کی مستقل عدم موجودگی کا نوجوان نسل اور اس کے مطالعے پر کا کیا اثر پڑتا ہے۔

مغرب میں بہت سے لوگ اپنے خاندان کے اراکین اور دوستوں کے ساتھ موسم سرما کی تعطیلات مشترکہ طور پر مل جل کر منانے کی مختصر مہلت کے منتظر تھے، جن سے وہ کئی ماہ سے مل نہ پائے تھے۔ برطانیہ کی حکومت کے انفیکشن کی شرح کو کم کرنے کے لئے بندشیں عائد کئے جانے کے حالیہ اعلان نے ان کی امیدوں پر پانی پھیر دیا ہے۔ عوامی پذیرائی اور واقعتاً حکومتی پالیسیوں کی قبولیت کا خاتمہ ہونا شروع ہو چکا یوں یہ واضح نہیں ہے کہ لاک ڈاؤن کس حد تک برقرار رہ سکتا ہے۔ تاہم جو بات واضح ہے وہ یہ ہے کہ پچھلے سال کے ذہنی اور جسمانی اثرات ایک طویل عرصہ تک باقی رہیں گے۔

(بشکریہ: نیویارک ٹائمز۔22-12-2020)


ای پیپر