ایم کیو ایم نے عمران خان کو چھوڑ کر پیپلزپارٹی سے ہاتھ ملانے کا عندیہ دیدیا
31 دسمبر 2019 (16:55) 2019-12-31

کراچی : پیپلزپارٹی ک سینئر رہنما قمر زمان کائرہ نے ایم کیو ایم کو وزارتیں دینے کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومتی اتحاد اس وقت عمران خان کی پالیسیوںسے تنگ ہیں اور وہ خود ان سے نجات چاہتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ دنوں پیپلزپارٹی چیئرمین بلاول بھٹو کی طرف سے ایم کیو ایم کو دی جانے والی وزارتوں سے متعلق حقائق بتاتے ہوئے قمر زمان کائرہ کا کہنا تھا کہ ہم حکومت گرانے کیلئے وفاداریاں تبدیل نہیں کرا رہے ، کسی کو اتحاد کی پیشکش کرنا جمہوری طریقہ ہے ، عوام کے لیے اتحاد بنانا سازش نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم سے متعلق عمران خان کیا کہتے تھے سب کو پتا ہے۔قمر زمان کائرہ نے کہا کہ وفاقی حکومت نے جتنے وعدے کیے ایک بھی پورا نہیں ہوا، یہ کسی سے ہاتھ ملانے کو بھی تیار نہیں تو ان کے ساتھ کیسے چلا جاسکتا ہی انہوں نے کراچی کی صفائی مہم کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ وفاقی وزیر علی زیدی شہر کا کچرا صاف کرنے آئے تھے مگر وہ بھی ایم کیو ایم کے ساتھ نہیں چل سکے۔

دوسری جانب پیپلز پارٹی کی پیشکش سے متعلق ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما خواجہ اظہار الحسن نے کہا کہ یہ شمولیت کی پیشکش نہیں، محض جلسے میں تقریر کی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم سندھ حکومت سے مایوس ہو کر وفاقی حکومت میں شامل ہوئے تھے نہ کہ کسی کے کہنے پر شامل ہوئے۔

خواجہ اظہار الحسن کا کہنا تھا کہ سندھ کے مسائل وزارتوں سے حل نہیں ہوں گے اگر پیپلز پارٹی ہاتھ ملانا چاہتی ہے تو فارمولا دے وزارتیں نہیں۔سندھ حکومت پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہاکہ پیپلز پارٹی نے کراچی کو کچھ نہیں دیا، ہاں اگر وہ بلدیاتی نظام صحیح کرے تو ہم ہاتھ ملانے کو تیار ہیں۔خواجہ اظہار الحسن نے کہاکہ ہم پی ٹی آئی کے مشروط اتحادی ہیں لیکن وعدے پورے نہیں کیے گئے جس پر مایوسی ہے، وزیراعظم کو نوٹس لینا چاہیے ان کے اتحادی مایوس ہو رہے ہیں۔


ای پیپر