Image Source : Facebook

آئی سی سی نے سری لنکن کرکٹ کو کرپٹ قرار دیدیا
31 دسمبر 2018 (21:44) 2018-12-31

کولمبو :انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے کرکٹ میں سری لنکن ٹیم کو سب سے زیادہ کرپٹ قرار دےدیا ہے۔ سری لنکا کے وزیر کھیل ہارن فرنینڈو نے کہا کہ انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کا موقف ہے کہ سری لنکن کرکٹ انتظامیہ اوپر سے نیچے تک کرپٹ ہے اور دبئی میں منعقد اجلاس میں انہیں اس سلسلے میں ایک خفیہ رپورٹ دکھائی گئی تھی۔

حالیہ عرصے میں الجزیرہ کے اسٹنگ آپریشن کے ذریعے منظر عام پر آنے والے اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل سمیت متعدد سری لنکن کرکٹرز کے کرپشن اسکینڈلز سامنے آئے۔کھیل کی عالمی گورننگ باڈی آئی سی سی کا اینٹی کرپشن یونٹ سری لنکا میں مستقل کرپشن اور بدعنوانی کی تحقیقات کر رہا ہے۔بحران کا شکار سری لنکا کرکٹ کے سابق صدر تھلنگا سماتھی پالا کے عہدے کی مدت ختم ہونے کے بعد بورڈ کے انتخابات کا انعقاد مئی میں ہونا تھا لیکن انتخابات تعطل کا شکار ہوئے اور آئندہ سال فروری میں ان کا انعقاد ہو گا۔

سماتھی پالا پر الزام تھا کہ جوئے میں ملوث ہونے کے باوجود انہوں نے آئی سی سی قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے صدر کا عہدہ اپنے پاس رکھا البتہ سماتھی پالا نے ان الزامات کو مسترد کردیا تھا۔ آئی سی سی اینٹی کرپشن یونٹ کے سربراہ ایلکس مارشل سے ملاقات کے بعد وطن واپسی پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے فرنینڈو نے کہا کہ بدقسمتی سے سری لنکا کو کرکٹ میں کرپشن کے اعتبار سے بدترین ملک قرار دیا گیا ہے۔

آئی سی سی کے مطابق مسئلہ صرف بکیز تک محدود نہیں بلکہ مقامی سطح پر کھیل کے انڈر ورلڈ سے تعلقات ہیں اور کرکٹرز سے زیادہ سری لنکن کرکٹ انتظامیہ کرپشن میں ملوث ہے۔


ای پیپر