بلوچستان ہائیکورٹ میں نئی حلقہ بندیوں کیخلاف سماعت
30 مئی 2018 (21:30) 2018-05-30

کوئٹہ: بلوچستان ہائیکورٹ میں نئی حلقہ بندیوں کے خلاف دائر آئینی درخواستوں پر سماعت جسٹس نعیم اختر افغان اور جسٹس عبداللہ بلوچ پر مشتمل بینچ نے کی۔


قومی اسمبلی کے حلقوں سے متعلق درخواستوں پر فریقین کے دلائل مکمل کر لی عدالت نے قومی اسمبلی کے حلقوں سے متعلق درخواستوں پر فیصلہ محفوظ کرلیا تاہم صوبائی اسمبلی کی نئی حلقہ بندیوں سے متعلق درخواستوں کی سماعت جاری ہے رکن اسمبلی مجید اچکزئی، زمرک اچکزئی، نصراللہ زیرے عدالت میں پیش ہوئے حلقہ 21 قلعہ عبداللہ ون اور حلقہ 22 قلعہ عبداللہ ٹو سے متعلق درخواستوں پر فیصلہ محفوظ کر لیا ارکان اسمبلی مجید اچکزئی، زمرک اچکزئی، سابق سینیٹر داود اچکزئی سمیت 6 درخواست گزاروں نے نئی حلقہ بندی کو چیلنج کیا تھا۔


الیکشن کمیشن کی جانب سے نئی حلقہ بندی کے تحت حلقہ 21 اور 22 کو ایک حلقہ بنایا گیا ہے30 درخواست گزاروں نے الیکشن کمیشن کی جانب سے نئی حلقہ بندیوں کے خلاف ہائیکورٹ میں درخواستیں دائر کر رکھی ہیں۔


ای پیپر