بھکاری گینگ نے کیا جینا حرام: معاشرہ حکومت کس کو دیں الزام
30 مارچ 2019 2019-03-30

بچے کی دوا لے کر کلینک سے باہرنکلی تو ایک عورت نے فریاد کی باجی بچے نے صبح سے دودھ نہیں پیا، اللہ کے واسطے کچھ دے دیں !چونکہ میرا بیٹا بھی بیمار تھا تو اس کا بچہ دیکھ کر ترس آیا اور 100 روپے کا نوٹ اسے تھما دیا۔ نوٹ لے کر وہ عورت انتہائی ناگواری سے بولی میرا بیٹا تو صرف لیکٹو جن 1 دودھ پیتا ہے،مجھے اس ۰۰۱ روپے کا کیا فائدہ یہ سن کر پہلے تو میں اس کی شکل دیکھتی رہ گئی پھر اچانک مجھے شدید غصہ آیا تو میں نے اسے کہا کہ تم ہٹی کٹی ہو جا کر مزدوری کرو اگر بچے کے دودھ کی اتنی فکرہے!

اسی طرح ایک ساتھی نے بتایا کہ ہماری گاڑی کے قریب ایک بابا جی آئے اور کہا کہ جائے نماز خرید لیں میں نے ان کو 100 روپے دیئے تو بولے اتنی بڑی گاڑی اور بس 100 روپے اور میں حیران رہ گئی کہ سو روپے ان کو جچتے ہی نہیں۔

میرے ایک جاننے والے نے بتایا کہ ان کے ہاں کافی عرصے تک اولاد نہ ہوئی تو کافی لوگ ان کے لیے دعا کرتے تھے انہی کے محلے میں ایک خواجہ سرا تھا اس نے دعا دی کہ اگر تمہارا بیٹا ہوا توپورے پانچ ہزارلوں گی۔ بہرحال اس واقعے کے کئی سالوں بعد اللہ نے ان کو بیٹا بیٹی کی دولت سے نوازا۔ ان صاحب نے دل کھول کر خیرات کی۔کافی عرصہ بعد اچانک وہ خواجہ سرا نظر آیا تو ان صاحب کو اپنا وعدہ یاد آگیا اور انہوں نے فوراً پانچ ہزار کا نوٹ نکال کر اس کو تھما دیا خواجہ سرا بہت حیران ہوا کہ اس شخص نے اتنے سال پرانی بات یاد رکھی۔اب کیا ہوا کہ وہ خواجہ سرا خود کو پیر ماننے لگا،یہ تو اللہ جانتا ہے کہ کس کی دعا سے اولاد ہوئی بہرحال وہ خواجہ سرا ہر دوسرے روز پیسے مانگنے آجاتا،صاحب نے اسے دو سو روپے دئیے تو اس نے اٹھا کر زمین پر دے مارے کہ مجھے بس دو سو دے رہے ہو اپنے پاس رکھو!

تو جناب یہ تھے چند مشاہدات اور ان مانگنے والوں کی دماغی حالت!

اب اصل موضوع کی طرف بڑھتے ہیں، کسی بھی مہذب معاشرے میں بنیادی ضروریات روٹی کپڑا صحت کا ملنا ہرانسان کا حق ہے اوریہ ریاست کی ذمہ داری ہوتی

ہے کہ وہ لوگوں کوروزگار مہیا کرے اور بہتری کے اقدامات کرے۔ ایک ایسا ماحول پیدا کرنا چاہیے جہاں لوگوں کے لیے آسانیاں پیدا ہوں، روزگار کے مواقع ہوں ان میں خود داری پیدا ہو اوروہ کما کر فخرمحسوس کریں۔ ریاست کی یہ بھی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ بھیک مانگنے والوں کی حوصلہ شکنی کرے۔

خوش قسمتی سے ہمارے ملک میں نرم دل اورخدا ترس لوگوں کی تعداد بہت زیادہ ہے اگر کوئی بھکاری آ جائے تو 10 میں سے7 لوگ اس کو کچھ نہ کچھ دے دیتے ہیں اس سے اس کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے کہ بنا کچھ محنت کیے ہی اچھی خاصی آمدن بن جاتی ہے،بس ایک دفعہ ہاتھ پھیلانا ہے اورپیسے حاضر، ہمارے ہاں یہ ایک انڈسٹری بنتی جا رہی ہے۔ بڑے شہروں میں ایک گھرکرائے پر لیا جاتا ہے، 50۔60 مرد عورت وہاں رہتے ہیں صبح مانگنے نکلتے ہیں اوررات کو واپس آتے ہیں پیچھے دوعورتیں چھوڑ جاتے ہیں ان کا کھانا وغیرہ تیار کرتی ہیں وہ اس کا خرچہ ان کو دیتے ہیں۔ پھریہ مختلف حربے آزماتے ہیں۔ان میں بڑے، بچے،عورتیں اورنقلی معذور افراد ہوتے ہیں۔

بڑے شہروں میں ان کو بھیک زیادہ ملتی ہے تو وہاں زیادہ اڈے قائم کر لیتے ہیں۔ ایک قسم جعلی ہیجڑوں کی ہے جو لوگوں کی گاڑیاں بجا بجا کر بھیک مانگتے ہیں،لوگ ان کی بد دعا سے ڈر کران کو بھیک دیتے ہیں یہ بھی خوب کمائی کرتے ہیں ہراشارے پر آپ کومانگتے ملیں گے۔ پھران میں کچھ نابینا ہوتے ہیں جب ان کو کبھی کوئی پکڑ لے تو ان کی نظر واپس آ جاتی ہے۔کچھ معذوروں کوپکڑیں تو ٹانگیں واپس آجاتی ہیں۔ ان ماہرنفسیات بھکاریوں کی پسندیدہ جگہیں عدالت، بس اسٹینڈ،ریسٹورنٹس، اسٹیشن، ہسپتال اورشاپنگ سینٹر ہیں جبکہ یہ ڈاکٹروں کے کلینک، میڈیکل سٹوراور کھانے پینے کے اسٹال پربھی نظر آتے ہیں۔ یہ لوگ آپ کو کہیں چین نہیں لینے دیں گے جس چوک ہوٹل دوکان پر کھڑے ہوں گے یہ آپ کی گاڑی اتنے حق سے بجائیں گے کہ آپ ڈر جائیں گے؟کھانے کی جگہ پریہ آپ کو اس طرح دیکھیں گے کہ آپ کا کھانا حرام ہو جائے گا کچھ دے کر ہی جان چھوٹے گی پھراس میں وارداتیے بھی آ جاتے ہیں۔ اکثر ایسا ہوتا ہے ڈرائیونگ سیٹ کی طرف کا شیشہ بجے گا آپ اس طرف دیکھیں گے تو دوسری طرف سے کوئی بچہ اپنے پتلے ہاتھ سے آپ کا موبائل یا پرس یا اور کوئی قیمتی چیز لے کر بھاگ جائے گا اور آپ کچھ بھی نہیں کر سکیں گے یہ بہت عام ہوتا جارہا ہے۔ پھر ایک اور قسم جو آپ کو مسجد میں نماز کے بعد سوال کرتے نظر آئیں گے جب آپ ان کو دیکھیں گے آپ کی آنکھ میں بھی آنسو آ جائیں گے ان کا مطالبہ تین سے دس ہزار روپے تک کا ہوتا ہے۔ کسی نے مکان کا کرایہ دینا ہے تو کسی نے فیس،بجلی گیس کا بل یا پھر کسی نے ادویات لینی ہوتی ہیں۔ ان میں ہر عمر کے مرد عورتیں شامل ہیں۔ان کے ہاتھوں روز ایک بندہ بھی پھنس جائے تو اچھی خاصی دیہاڑی لگ جاتی ہے۔ بدقسمتی سے ان پروفیشنل لوگوں کی وجہ سے ضرورت مند سفید پوش طبقہ مارا گیا ہے ان تک لوگوں کی رسائی بہت کم ہو گئی ہے۔

اب اس کا حل کیا ہے؟

یہ مسئلہ اتنا گھبیر ہو گیا ہے کہ یوں نظر آتا ہے کہ کبھی حل نہ ہوسکے گا۔اس کے حل کی سب سے پہلی ذمہ دار تو بہرحال حکومت ہے اور مدینے کی ریاست کا دعویٰ کرنے والوں کو سب سے پہلے اس مسئلے کی طرف توجہ دینی ہوگی۔لیکن ساتھ ہی ساتھ ہم سب کو بھی اس کے خاتمے میں اپنا کردار بخوبی ادا کرنا چاہیے۔سب اپنے اردگرد سفید پوش پر نظر رکھیں محلہ میں دفتر میں دوکان پر فیکٹری میں اپنے اردگرد والے کی ضرورت پوری کریں اصل نیکی یہ اوراسلام بھی اسی کا درس دیتا ہے اس میں اپنے بہن بھائی عزیز رشتے دار سب کا خیال کریں،کسی محنت کرنے والے بچے کی مدد کردیں کسی غریب پھل فروش سے بلا ضرورت کچھ خرید لیں۔ان پیشہ وربھکاریوں کو دینے سے بہتر ہے سفید پوشوں کی مدد کریں۔ حکومت کو بھی ایسا سخت ماحول بنانا چاہیے جہاں بھیک مانگنے والوں کی حوصلہ شکنی ہو۔ تاکہ وہ محنت مزدوری کی طرف آئیں۔ مانگنے والے بچوں کے لیے فری تعلیم اورخوراک کا انتظام ہو،معذوراورلاوارث بزرگ اولڈ ہوم میں لے جائے جائیں،نشئی افراد کو بحالی سنٹرز کے حوالے کیا جائے۔ اس کام کیلیے حکومت کو چاہیے کہ سماجی کارکنوں اورعام لوگوں کے ساتھ مل کر ایک بڑی مہم چلائی جائے اورایک مربوط لائحہ عمل تیار کیا جائے تاکہ معاشرے سے اس لعنت کا خاتمہ کیا جا سکے۔


ای پیپر