فردوس عاشق اعوان کیساتھ کابینہ اجلاس میں کیا ہوا ؟اصل خبر تو اب سامنے آئی
30 اپریل 2019 (22:36) 2019-04-30

اسلام آباد:ترجمان وزیرِ اعظم ندیم افضل چن نے کابینہ اجلاس میں معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان اور وزیرِ ہوا بازی غلام سرور کے حوالے سے میڈیا کے بعض حلقوں میں چلائی جانے والی خبر کی تردیدکرتے ہوئے کہاہے کہ معاون خصوصی اطلاعات اور وزیر ہوا بازی کے درمیان کسی قسم کی کوئی تلخی نہیں ہوئی۔

منگل کو اپنے ایک بیان میں ترجمان وزیرِ اعظم کی جانب سے کابینہ اجلاس میں معاون خصوصی برائے اطلاعات اور وزیرِ ہوا بازی کے حوالے سے میڈیا کے بعض حلقوں میں چلائی جانے والی خبر کی تردیدکی گئی ہے ۔وزیراعظم کے ترجمان ندیم افضل چن نے کہاکہ معاون خصوصی اور وزیر ہوا بازی کے درمیان کسی قسم کی کوئی تلخی نہیں ہوئی۔ ترجمان نے کہاکہ س حوالے سے چلائی جانے والی خبر بے بنیاد اور من گھڑت ہے۔

واضح رہے کہ اس سے پہلے میڈیا رپورٹس میں دعویٰ کیاگیا کہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیرِ ہوا بازی غلام سرور معاون، خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق پر برہم ہوئے، انھوں نے کہا کہ آپ نے میرے خلاف بیان کس حیثیت سے دیا، آپ میرے بارے میں بیان دینے سے پہلے سوچا سمجھا کریں۔معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کابینہ اجلاس میں اپنے بیان پر معذرت کر لی۔

وزیرِ اعظم عمران خان نے بھی بیان پر ناراضی کا اظہار کیا، اجلاس میں فردوس عاشق کو تنبیہہ کی گئی کہ وہ عقل سے سوچ سمجھ کر بات کیا کریں۔معلوم ہوا ہے کہ پارٹی کی سینئر قیادت بھی فردوس عاشق اعوان کے رویے سے نالاں ہے، ان کے حالیہ بیانات پارٹی بیانیے سے متصادم قرار دیے گئے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ فردوس عاشق کو گاڑیوں کا لمبا لشکر حلقے میں لے جانا بھی مہنگا پڑ گیا ہے، ان کی جانب سے مہنگی لینڈ کروزر اور پراڈو گاڑیوں پر ریلی نکالی گئی تھی۔ذرائع نے بتایا کہ اجلاس میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ حکومت کفایت شعاری مہم چلا رہی ہے اور دوسری جانب معاون خصوصی گاڑیاں گھما رہی ہیں، ایسے اقدامات سے اپوزیشن کو تنقید کا موقع ملے گا۔

خیال رہے کہ فردوس عاشق اعوان نے کہا تھا کہ وزارت پیٹرولیم میں ڈاکا مارا گیا اس لیے وزیر تبدیل ہوا، جس پر غلام سرور خان نے برہمی کا اظہار کیا تھا، بعد میں انھوں نے ٹویٹ کے ذریعے کہا کہ ان کے بیان کو توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا۔


ای پیپر