OIC, Council, Foreign Ministers, meeting, Islamabad, next year
29 نومبر 2020 (17:55) 2020-11-29

نائیجر: پاکستان کی امت مسلمہ میں بڑی سفارتی کامیابی، اور آئی سی وزرائے خارجہ کونسل کا اڑتالیسواں اجلاس اگلے سال اسلام آباد میں ہوگا۔

تفصیلات کے مطابق نائیجر میں او آئی سی وزرائے خارجہ کونسل کے اجلاس میں اسلامو فوبیا اور مسئلہ کشمیر پر الگ الگ قرار دادیں منظور کر لی گئیں، اس کے علاوہ پاکستان کو اگلے تین سال کے لیے 6 رکنی او آئی سی ایگزیکٹو کمیٹی کا رکن بھی بنا لیا گیا ہے۔

او آئی سی وزرائے خارجہ اجلاس نے مسئلہ کشمیر پر پاکستان کی کھل کر حمایت کر دی ، مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے 5 اگست 2019 کے غیر قانونی اقدامات کو مسترد کر دیا۔ منظور کی گئی قرارداد میں کہا گیا کہ بھارتی اقدامات کا مقصد مقبوضہ خطے میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنا ہے۔

سلامتی کونسل کی قرار دادوں کی براہ راست توہین اور استصواب رائے سمیت کشمیریوں کے بنیادی حقوق کو ان سے چھیننا ہے۔

واضح رہے کہ جموں و کشمیر کا تنازعہ ساتھ دہائیوں سے اقوام متحدہ سلامتی کونسل کے ایجنڈے پر ہے۔ جو کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق حل ہونا ہے۔

اسلامو فوبیا پر منظور کی گئی قرارداد میں کہا گیا ہے کہ اسلاموفوبیا عصر حاجر میں نسل پرستی اور مذہبی بنیادوں پر تعصب کی شک بن گئی ہے۔

قرآن پاک اور حضرت محمدﷺ کی شان میں گستاخی کے واقعات سے دنیا بھر کے تقریبا 2 ارب مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچی ہے۔

قرارداد میں 15 مارچ کو اسلامو فوبیا کے خلاف عالمی دن کے طور پر منائے جانے کا مطالبہ کیا گیا۔ اس حوالے سے او آئی سی کا نیویارک میں مستقل مشن اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں 15 مارچ کو اسلامو فوبیا کے خلاف عالمی دن منانے کی تحریک پیش کرے گا۔

خیال رہے کہ وزیر خارجہ کی او آئی سی وزرائے خارجہ کونسل اجلاس کی سائیڈ لائن پر متعدد وزرائے خارجہ سے ملاقاتیں ہوئیں۔ وزیر خارجہ نے اماراتی ہم منصب سے ملاقات میں پاکستانیو کو ویزوں کے اجرا پر پابندی کا معاملہ جلد حل کرنے کی بھی درخواست کی۔


ای پیپر