'Babar Azam aborted me', serious allegations against Lahore girl's national team captain
29 نومبر 2020 (10:59) 2020-11-29

لاہور:قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان کاسکینڈل سامنے آگیا، لاہور سے تعلق رکھنے والی لڑکی حامزہ نے بابر اعظم پر سنگین الزامات عائد کر دئیے۔

ذرائع کے مطابق پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم اس وقت نئے سکینڈل کی زد میں آگئے ہیں اور لاہور سے تعلق رکھنے والی حامزہ نامی خاتون نے کرکٹر پر سنگین الزامات عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بابر اعظم نے اسے پروپوز کیا، گھر والوں کے انکار پر وہ اسے گھر سے بھگا کر لے گئے جبکہ بابر اعظم نے اسے کرائے کے مکان میں رکھا ۔

حامزہ نے دعویٰ کیا کہ وہ بابر اعظم کی مالی معاونت کرتی رہی اور انہیں کرکٹر بنانے میں بھی اس کا اہم کردار ہے، بابر اعظم سے اس کا پرانا تعلق ہے اور وہ دونوں سکول فیلوز بھی رہ چکے ہیں۔

حامزہ نے مزید کہا کہ بابراعظم انہیں ہسپتال میں چیک اپ کے لیے بھی لے کر جاتے رہے ۔لاہور کی رہائشی لڑکی حامزہ مختار کا کہنا ہے کہ وہ ایک سیلون پر بیوٹیشن کا کام کرتی تھی، اسے وہاں سے جو تنخواہ ملتی وہ بابر اعظم کو لا کر دے دیتی تھی۔ 

لڑکی نے یہ دعویٰ بھی کیا ہے کہ 2017ءمیں اس نے تھانے میں دراخوست بھی درج کروائی کیونکہ مجھے جان سے مار دینے کی دھمکیاں دی جا رہی تھیں۔ تاہم بعد ازاں میں نے بابر اعظم سے صلح کرلی کیونکہ میں اس سے بے پناہ محبت کرتی تھی۔ میں نے اس پر اپنا سب کچھ نچھاور کر دیا کیونکہ میں چاہتی تھی کہ وہ کچھ بن جائے، اور میرے خلوص کے بدولت ہی وہ آج بہت اچھا کھلاڑی بن چکا ہے۔

حامزہ مختار نامی لڑکی نے دھمکی دی ہے اگر اسے انصاف نہ دیا گیا تو وہ پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے سامنے خود کشی کر لے گی۔

لڑکی نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ 2015 ءمیں وہ حاملہ ہوگئی تھی اور جب قومی کرکٹر بابر اعظم کو اس بات کا معلوم ہوا تو انہوں نے مجھ پر تشدد کرنا شروع کردیا جبکہ اپنے دوستوں اور اپنے بھائی کی مدد سے میرا اسقاط حمل کروادیا جس کا گواہ بابرا عظم کا دوست عثمان قادر بھی ہے۔

حامزہ مختار کا کہنا تھا کہ میرا مطالبہ ہے کہ بابر اعظم مجھ سے شادی کرے جبکہ میرا اس کے ساتھ پیسوں کا کوئی مطالبہ نہیں ہے۔

قومی ٹیم کے کپتا ن بابر اعظم اور حامزہ کا معاملہ ٹویٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن چکا ہے اور سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے ملے جلے ردعمل کا اظہار بھی کیا جارہا ہے۔


ای پیپر