Decision to issue an ordinance to protect the rights of parents
29 نومبر 2020 (07:21) 2020-11-29

اسلام آباد:وفاقی وزیر قانون ڈاکٹر بیرسٹر محمد فروغ نسیم نے وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ ایک آرڈیننس جاری کرنے کی تجویز پر تبادلہ خیال کیا جس کے تحت والدین بچوں اور ان کے شریک حیات کو گھر سے بے دخل کر سکیں گے اور ان والدین کے حقوق کا تحفظ ہو سکے گا جو اپنے بچوں کے ساتھ رہتے ہیں۔

ترجمان وزارت قانون و انصاف کے مطابق وزیر قانون وانصاف نے وزیر اعظم کو بتایا کہ وفاقی حکومت معاشرے کے کمزور طبقات کی مدد کے لئے ہر ممکن کوشش کر رہی ہے ، اس تناظر میں ایک آرڈیننس جاری کیا جاسکتا ہے جس میں 3 چیزوں پر توجہ دی جانی چاہئے۔ اول یہ کہ ، اگر مکانات بچوں کے زیر ملکیت ہیں تو بچوں کو والدین کو گھروں سے بے دخل کرنے سے روکا جا سکے۔

دوسرا یہ کہ ، اگر مکانات والدین کی ملکیت ہیں ، والدین کو یہ حق حاصل ہونا چاہئے کہ وہ بچوں اور ان کی شریک حیات کو آسان طریقہ کار، یعنی پولیس / ضلعی انتظامیہ کی مداخلت کے ذریعے 10 دن کے اندر اندر بے دخل کر سکیں۔ اور تیسرا یہ کہ اگر مکانات والدین یا دادا کے فنڈ سے تعمیر کیے گئے تھے ، اور بچوں کے نام تھے تو ، والدین کو ان کی زندگی تک کچھ سہولت فراہم کی جا سکے۔

ڈاکٹر فروغ نسیم نے یہ تجویز پیش کرتے ہوئے وزیر اعظم کو یہ بھی بتایا کہ اگر اس طرح کا آرڈیننس نافذ کیا گیا تو اس سے صدر پاکستان، وزیر اعظم ،وزیر قانون ، پوری کابینہ کو تمام والدین کی دعائیں ملیں گی۔ وزیر اعظم نے اس تجویز کی منظوری دے دی اور وزیر قانون سے کہا کہ وہ فوری طور پر آرڈیننس کا مسودہ تیار کریں۔


ای پیپر