2021 ءحکومت کے لیے ہر حوالے سے گھبرانے کا سال ہوگا ، سراج الحق
29 دسمبر 2020 (17:39) 2020-12-29

دیر:  امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ ملک بری طرح سیاسی گرداب میں پھنس چکا ہے۔ حکومت معاشی، سماجی ، سیاسی اور سفارتی ، چاروں محاذوں پر پسپا ہو رہی ہے۔ آئی ایم ایف عملی طور پر ملک کی پالیسیوں پر قابض ہے۔ وزیراعظم گورننس ، شفافیت ، اکانومی اور احتساب پر میگا یوٹرن لے چکے ہیں ۔

ان خیالات کاا ظہار انہوں نے دیر میں کارکنوں کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ ملک اس وقت شدید سیاسی گرداب میں پھنس چکاہے ۔ حکومت تمام محاذوں پر بری طرح بحرانوں میں مبتلا ہے۔وزیراعظم نے حکومت میں آنے سے پہلے قوم سے جو وعدے کیے تھے ، وہ نہ صرف پورے نہیں ہوئے بلکہ تمام اقدامات اس کے برعکس ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ گورننس میں ناکامی کا اعتراف وہ خود کر چکے ہیں ۔ عالمی اداروں کی رپورٹس کے مطابق کرپشن میں مزید اضافہ ہواہے ۔ حکومت کے اکانومی بارے بیان کردہ اعشاریوں میں مکمل طور پر تضاد پایا جاتاہے ۔ خطے میں اکانومی کے اعتبار سے ہم نیپال اور افغانستان سے بھی پیچھے جاچکے ہیں ۔ہماری کرنسی کاغذ کا ایک ٹکڑا بن چکی ہے ۔ سراج الحق نے دو سال کے اندر اس کی قدر میں 38 فیصد کمی ہوئی۔ احتساب پر وزیراعظم کا سارا بیانیہ جذباتی نکلا ۔ ان کے اردگرد وہ مافیاز موجود ہیں جو احتساب کے لیے سب سے پہلے مطلوب ہونے چاہئیں۔

امیرجماعت اسلامی سراج الحق نے کہاکہ مہنگائی ، بے روزگاری نے غریب سے اس کی دو وقت کی روٹی بھی چھین لی ہے ۔ گزشتہ اڑھائی سالوں میں لاکھوں لوگ خط غربت سے نیچے زندگی گزارنے پر مجبور کردیے گئے ہیں ۔ ایسے حالات میں جماعت اسلامی نے حکومت مخالف تحریک شروع کر کے عوا م کی حقیقی ترجمانی کا فیصلہ کیاہے ۔ ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ عوام سے کیے گئے وعدوں کی پاسداری کرتے ہوئے فور ی طور پر مہنگائی میں نمایاں کمی کرے  اور پٹرول ، ڈیزل اور بجلی کی قیمتوں میں کیا گیا اضافہ واپس لیا جائے ۔


ای پیپر