Source : Yahoo

صدارتی نمبر گیم میں اپوزیشن کا خفیہ منصوبہ
29 اگست 2018 (21:20) 2018-08-29

اسلام آباد:پیپلز پارٹی کی جانب سے نامزد صدارتی امیدوار اعتزاز احسن نے امید ظاہر کی ہے کہ مولانا فضل الرحمان ان کے حق میں صدارتی امیدوار کی دوڑ سے دستبردار ہوجائیں گے۔الیکشن کمیشن میں کاغذات نامزدگی کی منظوری کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اعتزاز احسن نے کہا کہ مولانا فضل الرحمن ذاتی دوست ہیں ،ان کا احترام کرتاہوں، امید ہے کہ وہ میرے حق میں صدارتی امیدوار کی دوڑ سے دستبردار ہوجائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ سب جماعتوں سے ہمیں ووٹ کی توقع ہے کیونکہ یہ ضمیر کاووٹ ہے اور سیکرٹ بیلٹ ضمیر کا ووٹ ہوتا ہے۔اعتزاز احسن نے کہا کہ آرٹیکل 63 اے اراکین اسمبلی کو پارٹی کے حق میں ووٹ دینے کا پابند کرتا ہے اور یہ وقت انصاف کا ہے ۔ پی ٹی آئی کو امیدواروں کے درمیان بھی انصاف کرنا ہے۔

انہوںنے کہاکہ صدارت کیلئے موزوں کون ہے اس کا فیصلہ ووٹر کو کرنا ہے تاہم امید ہے کہ پی ٹی آئی کے کئی ارکان مجھے بھی ووٹ دیں گے۔اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ صدارتی امیدوار کے لیے میرا نام ہونا میری پارٹی کا احسان ہے۔

دوسری طرف مولانا فضل الرحمن کا کہنا ہے کہ اگر ن لیگ اعتزاز احسن کے نام پر متفق ہو جاتی ہے تو مجھے اس پر کوئی اعتراض نہیں ،تجزیہ کاروں کے مطابق اگر ایسا ہو جا تا ہے تو یہ تحریک انصاف کے لئے بڑا جھٹکا ثابت ہو گا ،مولانا کی پیرپگارا سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کے دوران یہ عندیہ دیا ہے کہ اگر ن لیگ اعتزاز احسن کے نام پر متفق ہوگئی تو میں خود پیپلزپارٹی کے حق میں دستبردار ہوجاﺅنگا ۔

قبل ازیں چیف الیکشن کمشنر سردار محمد رضا صدارتی امیدواروں کے کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال کی اس موقع پر پیپلز پارٹی کے اعتزاز احسن اور تحریک انصاف کے ڈاکٹر عارف علوی پیش ہوئے۔دونوں امیدواروں کے کاغذات نامزدگی کی جانچ پڑتال کے بعد چیف الیکشن کمشنر نامزدگی فارم درست قرار دیتے ہوئے منظور کرلیے۔


ای پیپر