PTI, Imran Khan, debt, Shibli Faraz, IMF
28 نومبر 2020 (14:39) 2020-11-28

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز نے کہا ہے کہ معشیت بیمار ہو تو تب ہی آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑتا ہے۔ ہم نے کبھی نہیں کہا تھا کہ قرضے نہیں لیں گے۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شبلی فراز نے کہا کہ حقیقت سے پردہ اٹھا تو پتا چلا کہ ملک قرضوں میں ڈوبا ہوا تھا۔ خارجہ پالیسی کا نام نہیں تھا اور ملک آئسولیشن میں تھا۔ ایسے حالات میں وزیراعظم عمران خان نے پاکستان کو عالمی سطح پر عزت دلائی۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کا انداز معذرت خواہانہ نہیں، کوشش ہے ملک کو وہاں لے جائیں جہاں قرضوں کی ضرورت نہ پڑے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عالمی وبا نے دنیا کو ہلا کر رکھ دیا تھا، مضبوط ترین معشیتیں بھی متاثر ہوئیں اس صورتحال میں عمران خان نے انسانی جانوں کو بچانے کے علاوہ کاروبار کو بھی ساتھ لے کر چلنے کی حکمت عملی اپنائی۔

انہوں نے کہا کہ عالمی وبا کے دوران حکومت کی حکمت عملی کامیاب رہی اور عالمی طاقتوں کے علاوہ ڈبلیو ایچ او نے پاکستان کی شاندار پالیسی کا اعتراف کیا۔ شبلی فراز کا کہنا تھا کہ پاکستان واحد ایسا ملک تھا جس میں عالمی وبا کی پہلی لہر میں کم جانی نقصان ہوا۔

وفاقی وزیر نے ملکی معشیت پر بات کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی کوششوں سے مہنگائی میں کمی آرہی ہے۔ اس کے علاوہ ملک معاشی طور پر مستحکم ہو گیا ہے۔

شبلی فراز نے پی ڈی ایم جلسوں پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن رہنما ملک میں انتشار پھیلا رہے ہیں، وفاقی وزیر نے کہا کہ عالمی وبا کی دوسری لہر میں سیاسی جلسوں کا کوئی جواز نہیں بنتا۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے کوہاٹ اور جنوبی اضلاع کی ترقی پر توجہ دی اور کوہاٹ شاہراہ کی تکمیل سے علاقے کے عوام کو بہت فائدہ ہو گا۔


ای پیپر