کرونا سے پہلے ہی بھارتی شہریوں کی موت
28 مارچ 2020 (19:20) 2020-03-28

ممبئی :پوری دنیا جہاں کرونا سے بچائو کیلئے احتیاطی تدابیر اور ریلیف پیکج دے رہا ہے وہیں بھارتی عوام مودی سرکار کیخلاف پھٹ پڑی ۔

کرونا کی وجہ سے اس وقت پورا بھارت لاک ڈائون ہے ،شہریوں کا کہنا تھا کہ سرکار کیطرف سے ہمیں کوئی ریلیف نہیں دیا جا رہا ہے ،اگر حکومت کی طرف سے ہماری بروقت امداد نہ کی گئی تو کرونا سے بھارتی شہری مریں یا نہ مریں لیکن زیادہ تر لوگ بھوک سے مر جائینگے ۔

تفصیلات کے مطابق بھارت کی الگ الگ ریاستوں میں لوگوں کو ریلیف پیکج دینے کی باتیں کی جا رہی ہیں ،کئی ایک ریاستوں میں شہریوں کو صرف ایک ہزار ماہانہ دینے تک کی بات کی گئی ،جس پر شہری پھٹ پڑے ،شہریوں نے کہاہے کہ کرونا وائر سے سے موت ہو یا نہ ہومگر حکومت نے جو اقدامات کیے ہیں اس سے شہر ضرورمر جائیں گے، بھارتی ٹی وی کے مطابق اترپردیش کے ضلع بندا سے تعلق رکھنے والے رمیش کمار نے کہا کہ وہ جانتے تھے کہان کو آج دیہاڑی پر لے جانے والا کوئی نہیں ملے گا لیکن پھر بھی انھوں نے اپنی قسمت آزمانے کا فیصلہ کیا۔انھوں نے کہا کہ وہ چھ سو روپے روزانہ کماتے ہیں اور ان کی کفالت میں پانچ افراد ہیں۔ان کا کہناتھا چند دنوں تک ان کے پاس کھانے کیلئے کچھ نہیں ہو گا ،اگر حکومت نہ ہماری بروقت مدد نہ کی تو کیا ہم پتھر کھائیں گے ۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی طرف سے اعلان کردہ لاک ڈاؤن کا مطلب یہ ہے اگلے تین ہفتوں تک انھیں کام ملنے کا کوئی امکان نہیں ہے۔حقیقت میں بہت سے لوگوں کے پاس کچھ دنوں میں کھانے کے لیے کچھ نہیں ہو گا،جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ بھارتی آبادی جس میں 70 فیصد لوگ روزانہ دھیاری پر کام کرنے والے ہیں ،ان کیلئے لاک ڈائون میںسانس لینا مشکل سے مشکل تر ہوتا جائے گا ۔


ای پیپر