Triple murder case, Umm Rabab's petition, Supreme Court orders arrest of accused
27 نومبر 2020 (13:19) 2020-11-27

اسلام آباد:سندھ کے علاقے میہڑ میں تہرے قتل کے کیس میں اشتہاری ملزمان ملزمان کی گرفتاری کیلئے ام رباب چانڈیو کی درخواست پر سماعت کے دوران عدالت نے حکم دیا کہ دو مفرور ملزمان کے ساتھ مرتضیٰ چانڈیو کو بھی گرفتار کیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں ام رباب چانڈیوں کے اہلخانہ کے قتل کیس کی سماعت ہوئی تو انسپکٹر جنرل سندھ مشتاق مہر عدالت میں پیش ہوئے اور بتایا کہ مفرور دو ملزمان میں سے ذوالفقار چانڈیو کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔اس موقع پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ کیا سندھ پولیس دو مفرور ملزمان کو بھی گرفتار نہیں کرسکتی۔؟

عدالت نے ڈی آئی جی حیدر آباد سے 4 ہفتے میں رپورٹ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت 4 ہفتے کیلئے ملتوی کردی ہے۔

قبل ازیں چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی تو آئی جی سندھ عدالت میں پیش ہوئے اور بتایا کہ ملزم ذوالفقار چانڈیو کو گرفتار کر لیا ہے ،مرتضیٰ چانڈیو کو جلد گرفتار کر لیں گے۔

ام رباب چانڈیو نے کہا کہ سندھ کے موجودہ ایم پی اے ملزمان کی مدد کر رہے ہیں،مجھے سندھ کے سرداروں سے جان کا خطرہ ہے،پولیس ملزمان سے ملی ہوئی ہے،ایم پی ا ے سے ڈیل کرکے ملزم ذوالفقارکوپکڑاگیا۔

آئی جی سندھ مشتاق مہر نے عدالت کو بتایا کہ ہم نے ام رباب چانڈیو کو مناسب سکیورٹی دی ہوئی ہے جبکہ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ اگر آپ کے ساتھ کچھ ہوا تو آئی جی سندھ کو بلا لیں گے۔

یاد رہے کہ ام رباب اپنے باپ ،چچا اور دادا کے قتل کے مجرموں کو سزا کیلئے ننگے پاﺅں عدالت کے چکر لگاتی رہی ہیں اور انہوں نے احتجاج کے طور پر اعلیٰ حکام اور پھر عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا۔


ای پیپر