Asif Zardari,Bilawal bhutto,PDM,PTI,Vote of No Confidence,Marryam Nawaz,PMLN
27 مارچ 2021 (16:28) 2021-03-27

کراچی :چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ چیئرمین سینٹ پر ہمارے اعتراضات ہیں جس پر جدوجہد جاری ہے ،پریذائڈنگ افسر نے متنازع فیصلہ دے کر یوسف رضا گیلانی سے نا انصافی کی ہے ،سینٹ میں اپوزیشن لیڈر کیلئے یوسف رضا گیلانی کا حق تھا ،ن لیگ کا امیدوار متنازع تھا  ،کیسے سینٹ میں اپوزیشن لیڈر کیلئے ن لیگ کے امیدوار کو ووٹ دینے کیلئے کہہ سکتا تھا ۔

تفصیلات کے مطابق بلاول بھٹو زرداری نے کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ یہ پہلی دفعہ ہوا ہے جب سینٹ انتخابات میں سب سے زیادہ سیٹیں رکھنےو الی جماعت کو شکست ہوئی ہے ،سینیٹ کی تاریخ ہےجس کی اپوزیشن میں اکثریت ہوتی ہےقائدحزب اختلاف بھی اس کاہوتا ہے،انہوں نے کہا بی اے پی کے سینٹرز اب اپوزیشن بینچز میں بیٹھ رہے ہیں ،انہیں ویلکم کرتا ہوں ،تحریک عدم اعتماد صرف اُسی صورت میں کامیاب ہو سکتی ہے جب حکومتی ارکان کو اپوزیشن بنچیز پر بٹھایا جائے گا ، ہم حکومتی لوگوں کو توڑ کر ہی اس کٹھ پتلی حکومت کے خلاف پارلیمان میں جدوجہد کر سکتے ہیں۔

پی ڈی ایم کے اختلافات پر بات کرتے ہوئے بلاول کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی چاہتی ہے کہ پی ڈی ایم کا اتحاد برقرار رہے ،پی ڈی ایم کی بنیاد میں نے رکھی ،مریم نواز پر تنقید کر کے پی ڈی ایم کا اتحاد بکھیرنا نہیں چاہتا ،ن لیگ کو دیکھنا چاہیے کہ پی ڈی ایم میں موجود دیگر جماعتوں میں اصل اتحاد ی کون ہیں ۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ ن لیگ کے رہنمائوں کا احترام اور مریم نواز کی عزت کرتا ہوں ،جب بھی مشکل وقت آیا کبھی مریم نواز پر تنقید نہیں کی نہ کرونگا ،پی ڈی ایم کو مشورہ دیتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا حکومت کے ارکان توڑنے سے عدم اعتماد کی تحریک کامیاب ہوتی ہے ،مل کر پارلیمنٹ میں کام کرینگے تو حکومت کو نقصان پہنچا سکتے ہیں ،انہوں نے کہا سلیکٹڈ کا لفظ میںنے دیا جانتا ہوں کس کیلئے استعما ل ہو سکتا ہے کس کیلئے نہیں ۔محسوس ہوا پیپلزپارٹی کو دیوار سے لگا یا جا رہا ہے ،یوسف رضا گیلانی کو ہدایات دیں کہ سب جماعتوں کو ساتھ لے کر چلیں ۔

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ سینیٹ میں اپوزیشن لیڈر کے لیے ن لیگ کا امیدوار متنازع تھا جبکہ ایوان بالا میں قائد حزب اختلاف کا عہدہ پیپلز پارٹی کا حق تھا۔


ای پیپر