Source : Yahoo

عائشہ گلالئی چاروں حلقوں سے اپنی ضمانتیں ضبط کروا بیٹھیں
27 جولائی 2018 (18:12) 2018-07-27

اسلام آباد:تحریک انصاف گلالئی کی سربراہ عائشہ گلالئی نے الیکشن 2018 میں قومی اسمبلی کے 4 حلقوں سے انتخاب لڑا اور چاروں میں اپنی ضمانت ضبط کرابیٹھیں ، انہوں نے صرف ایک حلقے میں ایک ہزار سے زائد ووٹ حاصل کیے۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری کیے گئے سرکاری نتائج کے مطابق پاکستان تحریک انصاف گلالئی کی سربراہ عائشہ گلالئی وزیر نے این اے 53 اسلام آباد میں عمران خان کے مقابلے میں انتخاب لڑا اور ضمانت ضبط کرا بیٹھیں ۔یہ امیدواروں کی تعداد کے اعتبار سے پاکستان کا سب سے بڑا حلقہ تھا جہاں سے 33 امیدواروں نے انتخابی دنگل میں حصہ لیا ۔

اس حلقے سے عائشہ گلالئی نے صرف 138 ووٹ حاصل کیے جبکہ یہاں سے متعدد آزاد امیدوار ایسے تھے جنہوں نے ان سے زیادہ ووٹ لیے۔تحریک انصاف گلالئی کی سربراہ نے سابق وزیر اعلی خیبر پختونخوا پرویز خٹک کا بھی مقابلہ کیا اور ضمانت ضبط کرا بیٹھیں ۔ انہوں نے این اے 25 نوشہرہ کے انتخابی معرکے میں 959 ووٹ حاصل کیے۔

عائشہ گلالئی سندھ کے ضلع سجاول کے حلقہ این اے 231 سے بھی امیدوار تھیں اور انہیں یہاں سے 827 ووٹ ملے۔تحریک انصاف گلالئی کی سربراہ عائشہ گلالئی نے سب سے زیادہ ووٹ جہانگیر ترین کے آبائی حلقے این اے 161 لودھراں سے حاصل کیے ۔ یہاں انہیں ایک ہزار 614 ووٹ ملے لیکن ضمانت ان کی یہاں سے بھی ضبط ہوئی۔ یہ واحد حلقہ تھا جہاں عائشہ گلالئی کو ایک ہزار سے زائد ووٹ پڑے۔


ای پیپر