ashraf ghani,Afghanistan,Taliban,directly,neto
27 فروری 2021 (10:07) 2021-02-27

کابل : افغان صدر نے کہا ہے کہ طالبان کے حامیوں سے اب سیدھے لفظوں میں بات ہونی چاہیے۔ کچھ سخت فیصلے لینے ہوں اور انہیں قبول بھی کرنا ہو گا۔

ایک انٹرویو میں افغان صدر اشرف غنی نے کہا کہ نیٹو کے فیصلے سے امن کے عمل میں مدد ملے گی۔ افغانستان میں ہمیں امن قائم کرنے کا ایک اور موقع ملا ہے۔نیٹو فورسز کے یہاں سے  جانے کے بعد کیا حکمت عملی ہو گی یہ اس وقت کی صورتحال کے مطابق فیصلہ کیا جائیگا۔ میرے خیال میں جو لوگ طالبان کی حمایت کرتے ہیں ان سے سیدھے لفظوں میں بات ہونی چاہیے۔امریکہ میں نئی انتظامیہ آنے اور جس طرح سے افغانستان کے معاملات طے کئے جا رہے ہیں اس سے میں مطمئن ہوں۔کچھ سخت فیصلے لینے ہوں گے اور انہیں قبول بھی کرنا ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ کی جنگ یہاں ختم ہو چکی ہے۔وقت آگیا ہے جب طالبان اور ان کے حامی بھی امن کے حصول کیلئے ویسی کی دلچسپی دکھائیں جیسی انہوں نے جب کیلئے دکھائی تھی۔میرے پاس صرف یہی ایک آپشن ہے کہ میں انتخابات کروا سکتا ہوں۔

یاد رہے کہ  دوحہ میں ہوئے سمجھوتے کے مطابق افغانستان سے سارے امریکی فوجیوں کو مئی 2021 تک واپس چلے جانا ہے۔مگر امریکہ کا کہنا ہے کہ طالبان اپنے وعدہ نہیں نبھا رہے جبکہ اسی طرح کا الزام طالبان کی طرف سےامریکہ پر لگایا جا رہا ہے کہ انہوں نے وعدے کے مطابق ابھی تک طالبان قیدی رہا نہیں کئے۔


ای پیپر