Saudi Arabia, US report, Jamal Khashoggi, assassination, Joe Biden, MBS
27 فروری 2021 (08:26) 2021-02-27

ریاض: سعودی عرب نے جمال خاشقجی کے قتل پر امریکی رپورٹ مسترد کر دی ، سعودی وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ امریکی رپورٹ کے مندرجات منفی اور ناقابل قبول۔

اپنے بیان میں ترجمان سعودی وزیر خارجہ نے کہا کہ کانگریس میں پیش کردہ رپورٹ غلط معلومات پر مبنی ، مملکت نے واقعہ میں ملوث گروہ کے تمام افراد سے مکمل تحقیقات کیں ، ملوث مجرموں کو سزائیں سنائی گئیں جبکہ مقتول کے اہل خانہ نے سعودی عدالتوں کے فیصلے کو سراہا۔

سعودی وزارت خارجہ نے واضح کیا کہ سعودی عرب اور امریکا میں شراکت داری باہمی احترام پر مبنی ہے۔

واضح رہے کہ امریکا کی جانب سے جاری خفیہ رپورٹ 2 سال پرانی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ جمال خاشقجی کے قتل کی اجازت سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے دی۔

رپورٹ میں انکشاف کیا گیا کہ سعودی ولی عہد نے آپریشن استنبول میں خاشقجی کو ترکی سے گرفتار کرنے یا مارنے کا حکم دیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق سعودی ولی عہد نے جمال خاشقجی کو مملکت کیلئے خطرہ قرار دیا تھا۔

واضح رہے کہ امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ سے منسلک سعودی صحافی جمال خاشقجی 2 اکتوبر 2018 کو ترکی میں استنبول میں واقع سعودی قونصل خانے سے لاپتہ ہو گئے تھے جس کے بعد ان کو قتل کیے جانے کی تصدیق ہوئی تھی۔ تاہم بعد میں سعودی عرب کی جانب سے اس بات کا اعتراف کیا گیا تھا کہ سعودی صحافی جمال خاشقجی استنبول میں واقع قونصل خانے میں لڑائی کے دوران ہلاک ہوئے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز جمال خاشقجی کے قتل کی رپورٹ منظر عام پر لانے سے پہلے سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبد العزیز اور امریکی صدر جو بائیڈن میں ٹیلی فونک رابطہ ہوا تھا۔

عرب میڈیا کے مطابق شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے جوبائیڈن کو منصب سنبھالنے پر مبارک باد دی اس کے علاوہ دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید مضبوط کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی ۔

اس موقعہ پر امریکی صدر جو بائیڈن نے خطے اور دنیا میں سلامتی اور استحکام کی خواہش کا اظہار کیا ۔ شاہ سلمان نے خطے کے اہم امور اور مشترکہ مفادات کی پیشرفت پر بھی بات چیت کی۔


ای پیپر