کراچی میں کچرے کے ڈھیر کی اصل وجہ کرپشن ہے :مصطفی کمال
27 اگست 2019 (18:42) 2019-08-27

کراچی : چیئرمین پاک سرزمین پارٹی مصطفی کمال نے کہا ہے کہ کراچی والوں کیلئے چھوٹے سے چھوٹا عہدہ بھی قبول، میئر کا آرڈر تسلیم کر کے پوزیشن سنبھال لی تھی، چند گھنٹے میں ہی تقرری منسوخ کر دی گئی، کراچی میں کچرا نہ اٹھنے سے متعلق اہم انکشاف کرتے ہوئے مصطفی کمال کا کہنا تھا کہ کرپشن کی وجہ سے کچرا نہیں اٹھ رہا، اب وسیم اختر اور چاروں ڈسٹرکٹ چیئرمینز مستعفی ہو جائیں۔

انہوں نے کہا کراچی کیلئے 30 ہزار کروڑ روپے خرچ کیے، اپنوں کو نہیں نوازا، راتوں کی نیندیں قربان کیں، میرا شہر کراچی کچرا کنڈی بن گیا ہے، ہمیں کہتے ہیں آفس آ، کچرا سڑکوں پر ہے آفس جا کر کیا کروں گا، صوبائی اور ڈسٹرکٹ حکومت کو دوبارہ پیشکش ہے کہ اختیارات دو، 3 ماہ میں شہر صاف لے لو، وزیراعظم صاحب، پی ایس ڈی پی کیلئے 70 فیصد رقم کراچی سے آتی ہے، وزیراعظم صاحب ملک کی معاشی طاقت کراچی کو کرپشن تباہ کر رہی ہے، اختیارات اور وسائل اتنے ہیں کہ کراچی کو صاف کیا جاسکتا ہے۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مصطفی کمال نے کہا کراچی کے مسائل بڑھتے جا رہے ہیں ، کراچی کے جومسائل ہیں اس میں رات کو سونا حرام ہے، الائیش ٹھکانے نہ لگانے سے وبائی امراض پھیل گئے، میئر کراچی وسیم اختر نے کل میری پروجیکٹ ڈائریکٹرکی تقرری کا نوٹیفیکیشن جاری کیا، مصطفیٰ کمال نے کہا کہ میئر کراچی پتہ نہیں کس خیال میں تھے کہ میں اس پر کیا رد عمل دوں گا،میں نے میئر کراچی کے آرڈر کو تسلیم کر کے اپنی پوزیشن سنبھال لی،چندگھنٹوں میں ہی میئر کراچی نے میری تقرری کا آرڈر منسوخ کر دیا،میں نے کہا تھا کہ میرا باس میئر کراچی اور باقی ماتحت ہیں، کراچی کیلئے 30 ہزار کروڑ روپے خرچ کئے اور انہوں نے کہا کہ میں نے اپنوں کو نہیں نوازا میں نے راتوں کی نیندیں قربان کیں، یہاں تک کہ کراچی کو کہاں چھوڑ کر گیا تھا، انہوں نے مزید کہا کہ سمندر میں پانی کی لائنیں ڈال کر بابا بھٹ جزیرے کو پانی پہنچایا ، مبارک ویلج تک سڑکیں بنائیں، میرا شہر کراچی کچھرا کندی بن گیا ہے، ہماری فریاد پر مذاق اڑایا جاتا ہے اورگالیاں نکالی جاتی ہیں ، میں جانتا تھا کہ مسئلہ اختیارات کا نہیں کرپشن کا ہے۔


ای پیپر