Anti-state statement: Interim bail of PML-N leader Javed Latif arrested
کیپشن:   فائل فوٹو
27 اپریل 2021 (10:37) 2021-04-27

لاہور: ریاست مخالف بیانات کے کیس میں مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنما میاں جاوید لطیف کی عبوری ضمانت خارج کرتے ہوئے انھیں گرفتار کر لیا گیا ہے۔

لیگی رہنما کے خلاف کیس کی سماعت لاہور کی مقامی عدالت میں ہوئی جس میں سرکاری وکیل کی جانب سے استدعا کی گئی کہ میاں جاوید لطیف کی عبوری ضمانت کو خارج کیا جائے۔

کیس کی سماعت کے دوران اپنے دلائل دیتے ہوئے سرکاری وکیل کی جانب سے موقف اپنایا گیا کہ مسلم لیگ (ن) کے رہنما میاں جاوید لطیف نے اپنے پارٹی لیڈر کی محبت میں حد سے تجاوز کر لیا جس کے ثبوت بطور ویڈیوز کے موجود ہیں۔

سرکاری وکیل نے کہا کہ میاں جاوید لطیف کی متنازع ویڈیو کا فرانزک کروانے کیلئے اسے بھجوا دیا گیا ہے۔

انہوں نے معزز عدالت سے استدعا کی میاں جاوید لطیف کے معاملے میں پراسیکیوشن کا مقدمہ قانون کے عین مطابق ہے، اس لئے ان کی ضمانت کو مسترد کیا جائے۔

دوسری جانب میاں جاوید لطیف کے وکیل کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) کی نائب صدت مریم نواز شریف کے قتل کی سازش تیار کی گئی تھی، اس پر ہی غم وغصہ کا اظہار کرتے ہوئے میرے موکل نے جذباتی انداز میں بات کی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ کرائم انوسٹی گیشن ایجنسی (سی آئی اے) لاہور میاں جاوید لطیف کے خلاف مقدمے کو دیکھ رہی ہے۔ یہاں عدالت کے روبرو کسی دہشتگردی میں ملوث شخص کی ضمانت نہیں لگی۔ لیگی وکیل کا کہنا تھا کہ پولیس کو اختیار ہی نہیں کہ وہ ان معاملات پر مقدمات درج کرتی پھر۔

تاہم معزز عدالت نے دونوں جانب کے وکلیوں کے دلائل سننے کے بعد لیگی رہنما میاں جاوید لطیف کی درخواست ضمانت پر فیصلہ دیتے ہوئے اسے مسترد کر دیا جس کے بعد کمرہ عدالت میں ہی موجود پولیس نے انھیں گرفتار کر لیا۔


ای پیپر