حکومت نے منی نہیں میگا بجٹ پیش کیا : رحمن ملک
26 ستمبر 2018 (16:08) 2018-09-26

اسلام آباد: پیپلز پارٹی کے رہنما سابق وزیر داخلہ رحمن ملک نے کہا ہے کہ وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کو اقوام متحدہ کے اجلاس میں پانی اور کشمیر کے مسئلے کو ترجیحی بنیادوں پر اٹھانا چاہیے، حکومت کا پیش کردا بجٹ منی نہیں بلکہ میگا بجٹ ہے، بجلی، گیس اور پٹرول کی قیمتوں میں اضافے سے مہنگائی کا طوفان آئے گا، عوام نے مہنگائی کے خلاف دھرنا دیا تو کوئی نہیں روک سکے گا،افغانیوں اور دوسرے ملک کے سہریوں کو شہریت کسی ایک فرد کی خواہش پر نہیں دی جا سکتی، اس کیلئے ملک کے اندر قوانین موجود ہیں۔

پارلیمنٹ ہاس کے باہر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔ رحمن ملک نے کہا کہ وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کو اقوام متحدہ کے اجلاس میں پانی اور کشمیر کے مسئلے کو ترجیحی بنیادوں پر اٹھانا چاہیے تاکہ ساری دنیا کے سامنے بھارت کا چہرہ بے نقاب ہو سکے۔ کشمیر کے اندر بھارتی در اندازی اور دہشتگردی کو بے نقاب کیا جانا چاہیے۔ اس سے قبل صدر پاکستان نے اپنی پہلی تقریر میں مسئلہ کشمیر کو سب سے آخر میں رکھا تھا اب وزیر خارجہ یہ غلطی نہ دہرائیں۔بھارت بذچل ملک ہے اسی لیے دھمکیاں دیتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے جو بجٹ پیش کیا ہے وہ منی نہیں بلکہ میگا بجٹ ہے۔ بجلی، گیس اور پٹرول کی قیمتوں اضافے سے ملک کے اندر مہنگائی کا طوفان آئے گا۔مہنگائی بڑھی تو پھر عوام حکومت کے خلاف دھرنے دے گی جس کو روکنا نا ممکن ہوگا۔ پاکستان کئی دہائیوں سے دہستگردی کے خلاف بڑی جنگ لڑ رہا ہے، دنیا کو پاکستان کی قربانیوں کا اعتراف کرنا چاہیے۔ افغانیوں اور دوسرے ملک کے سہریوں کو شہریت کسی ایک فرد کی خواہش پر نہیں دی جا سکتی، اس کیلئے ملک کے اندر قوانین موجود ہیں۔ سندھ کے اندر بچی کا قتل ہونا افسوس ناک ہے۔ سندھ پولیس کو اپنا رویہ ٹھیک کرنا ہوگا۔


ای پیپر