فوٹوبشکریہ فیس بک

وزیراعظم سعودی عرب سے 10 ارب لے کر آئے یا عرب پتا نہیں چلا: خواجہ آصف
26 ستمبر 2018 (14:27) 2018-09-26

اسلام آباد: پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما نے کہا کہ وزیراعظم سعودی عرب گئے تو ان کے لوگوں نے کہا 10 ارب لے آئے، اب یہ نہیں پتا چلا ارب تھا یا عرب تھا۔

قومی اسمبلی کے ایوان میں حکومت پر تنقید کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ حکومت کی خارجہ پالیسی کی وجہ سے پاک بھارت تعلقات سے متعلق پاکستان کو شرمندگی اٹھانا پڑی۔ امریکی وزیر خارجہ کے دورے میں جو دعوے کیے گئے بھارت میں انکا جواب آگیا۔ امریکی وزیر خارجہ کا بھارت میں بیان پاکستان دوستی نہیں دشمنی پر مبنی تھا۔ ہمیں کہا گیا کہ نئے سرے سے تعلقات کا آغاز ہوا، 24 گھنٹے میں ان دعووں کا کچا چٹھا سامنے آگیا۔

کہا گیا کہ فرانس سے کال آئی ہم نے نہیں لی، یہ بھی پاکستان کیلئے شرمندگی کا باعث بنا۔ حکومت نے توقعات کو جسطرح ڈھیر کیا، ماضی میں کسی حکومت کو ایسی صورتحال کا سامنا نہیں کرنا پڑا۔

رہنما پاکستان تحریک انصاف شیریں مزاری نے خواجہ آصف کی تقریر کا بھرپور جواب دیتے ہوئے کہا کہ ن لیگ کے دور میں خارجہ پالیسی پارلیمنٹ میں ڈسکس نہیں ہوتی تھی، اپوزیشن میں آتے ہی خواجہ آصف کو خارجہ پالیسی کی یاد آ گئی۔

انہوں نے مزید کہا کہ جو لوگ یوٹرن کی بات کرتے ہیں وہ اپنی پالیسیوں کو یاد کریں۔ نون لیگ نے چار سال تک وزیر خارجہ لگایا ہی نہیں۔ افغان مہاجرین سے متعلق گزشتہ حکومت نے کیا اقدامات کیے؟؟؟ یہ بھی کہا نئی خارجہ پالیسی باہمی احترام پر مبنی ہو گی۔


ای پیپر