چین میں ایڈز کے مریضوں کی تعداد میں خطرناک اضافہ
26 نومبر 2018 (13:23) 2018-11-26

بیجنگ: چین میں ہر10000 افراد میں سے9 ایڈز کا شکار ہیں۔بیماری کی یہ شرح دوسرے ممالک کے مقابلے میں بہت کم ہے ۔اس بیماری کی بڑی وجہ جنسی ملاپ ہے۔

چین کے صحت کمیشننے گزشتہ روز پریس ریلیز جاری کیا ہے۔ جس میں بتایا گیا ہے کہ چین نے ایچ آئی وی ایڈز کی خون کیمنتقلی کے ذریعے روک تھام کے لیے ضروری اقدامات کیے ہیں۔ اور اب ان ذرائع سے ایڈز پھیلنے کے امکانات تقریباً ختم ہوگئے ہیں۔

قومی صحت کمیشن کے ایک اعلیٰ عہدے دار وانگ بن کا کہنا ہے کہ ایچ آئی وی کی خون کے ذریعے بیماری پر قابو پالیا گیا ہے۔جس کی وجہ سے 2012کے مقابلے میں بیماری میں 44.5فیصد تک کمی ہوگئی ہے۔ دریں اثناء ماں سے بچے میں خون کے ذریعے منتقلی میں بھی 2012کے 7.1فیصد کے مقابلے میں کمی واقع ہوئی ہے۔جو 2017کے اختتام تک 4.9فیصد ریکارڈ کی گئی۔

ایچ آئی وی کے ٹیسٹ کی کوششیں بھی تیز کردی گئیں ہیں اور گزشتہ سال ملک بھر میں دو سو ملین افراد کے ٹیسٹ کیے گئے ۔تاکہ ایچ آئی وی کی تشخیص کی جاسکے۔


ای پیپر