سعودی حکومت سے معاہدے کے بعد رہائی ملی : شہزادہ ولید بن طلال
26 مارچ 2018 (16:19) 2018-03-26


ریاض :دنیا کے امیر ترین افراد میں شمار کئے جانے والے سعودی شہزادے ولید بن طلال نے کہا ہے کہ انہیں سعودی حکومت سے معاہدے کے بعد رہائی ملی ہے اور ان کی فرم کنگڈم ہوٹرنگ اپنے 13 ارب ڈالرز کے اثاثے جلد سعودی عرب منتقل کرے گی۔


ایک انٹرویو میں ولید بن طلال کا کہنا تھا کہ انہوں نے کسی چیز پر دستخط کئے ہیں۔ تاہم وہ اس کو سیٹلمنٹ کا نام نہیں دے سکتے۔ تاہم دوسرے لوگ اسے معاہدہ کہہ سکتے ہیں۔ شہزاد ولید بن طلال کا کہنا تھا کہ انہوں نے سعودی حکومت سے ایک معاہدہ کیا ہے تاہم انہوں نے اس کی تفصیلات سے آگاہ نہیں کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ معاہدہ حساس اور خفیہ ہے وہ اس کا احترام کرینگے۔ ان کے گلوبل انوسٹمنٹ فرم میں اب بھی 95فیصد حصص داری اب بھی برقرار ہے۔


شہزادہ طلال نے کہا کہ وہ سعودی عرب میں منصوبوں کے لئے شاہی دولت فنڈ سے مشترکہ سرمایہ کاری کے لئے رابطہ میں ہیں اور ان کی کنگڈم ہولڈنگ اپنے 13 ارب ڈالرز کے اثاثے سعودی عرب منتقل کرے گی۔ شہزادہ ولید بن طلال سعودی عرب میں کرپشن الزامات کے تحت تین ماہ تک بند رہے۔ انہیں رواں سال جنوری کے آخر میں رہائی ملی ۔


ای پیپر