سعودی عرب پر غوثی باغیوں کا میزائل حملہ ناکام
26 مارچ 2018 (15:48)


ریاض :یمن میں آئینی حکومت کی بحالی کے لیے سرگرم عرب فوجی اتحاد نے یمن سے حوثی باغیوں کی جانب سے سعودی عرب پر سات بیلسٹک میزائل حملے ناکام بنا کر مملکت کو تباہی سے بچا لیا۔


تفصیلات کے مطابق عرب فوجی اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے الریاض میں ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ ایران نواز حوثی شدت پسندوں نے سعودی عرب پر سات میزائل داغے۔ ان میں سے تین میزائل دارالحکومت الریاض کی طرف، ایک خمیس مشیط، ایک نجران اور دو جازان کی جانب داغے گئے تھے۔حوثی شدت پسندوں کی جانب سے میزائل حملوں کا مقصد مملکت کو دہشت گردی سے دوچار کرنا، شہریوں کی جانوں کو خطرے میں ڈالنا اور بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانا تھا تاہم سعودی محکمہ دفاع اورعرب اتحادی فوج نے مشترکہ طورپر حوثیوں کے داغے گئے میزائل ہدف تک پہنچنے سے قبل فضا ہی میں تباہ کردئیے۔


دارالحکومت ریاض کی جانب داغے گئے ایک میزائل کے ٹکڑے لگنے سے سعودی عرب میں مقیم ایک مصری شہری جاں بحق اور دو زخمی ہو گئے۔ اس حوالے سے مزید تفصیل جلد جاری کی جائے گی۔کرنل المالکی کا کہنا تھا کہ حوثیوں کی طرف سے یہ دشمنانہ اور اندھا دھاھند میزائل حملوں کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے۔ ایران حوثیوں کی مدد کے ذریعے خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازشیں جاری رکھے ہوئے ہے۔انھوں نے کہا کہ متعدد بیلسٹک میزائل فائر کرنا ایک سنگین پیش رفت ہے۔ریاض میں عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ انھوں نے فضا میں دھماکے سنے اور دھواں دیکھا۔یمن میں حوثی باغی حکومت کے خلاف سرگرم ہیں اور ملک کے کئی علاقے ان کے قبضے میں ہیں۔ سعودی عرب اور دوسرے عرب ممالک حوثیوں کی طرف سے مسلسل بیلسٹک میزائل حملوں کی مذمت کرتے ہوئے انہیں اقوام متحدہ کی قراردادوں 2216 اور 2231 کی کھلم کھلا خلاف ورزی قرار دیتے ہیں۔


ای پیپر