دہلی شہر میں حالا ت بے قابو ،فوج طلب
26 فروری 2020 (17:03) 2020-02-26

لاہور :دوسرے ملکوں میں آگ لگانے والا بھارت آج خود اپنی ہی ملک میں لگائی آگ کی لپیٹ میں آچکا ہے ،دروہ ٹرمپ پر دہلی میدان جنگ بن گیا ،فرقہ وارانہ فسادات میں مرنے والوں کی تعداد 18ہوگئی ، دہلی میں فوج بلانے کا مطالبہ کر دیا گیا ۔

بھارتی حکام نے متاثرہ شہر کے شمال مشرقی علاقوں میں تمام تعلیمی ادارے بند کردیئے ہیں اور بورڈ کے امتحانات ملتوی کردیئے ہیں۔بھارت کے قومی سلامتی کے مشیر اجیت دیول نے منگل کی رات تشدد سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کیا اور اعلی پولیس حکا م سے ملاقات کی۔بعدازاں دہلی ہائیکورٹ نے ایک ہنگامی اجلاس میں پولیس کو ہدایت کی ہے کہ وہ تشدد میں زخمی ہونے والے افراد کو علاج کےلئے محفوظ راستہ یقینی بنائیں۔

دہلی شہر میں اس وقت بڑے پیمانے پرتشدد واقعات پیش آئے جب مسلح گروپوں نے دہلی کے شمال مشرقی علاقوں میں لوٹ مار جلا گھیرا کرتے ہوئے عمارتوں اور گاڑیوں کو آگ لگادی۔

بدھ کی صبح وزیراعلی اروند کجروال کی رہائش کے باہر جمع ہونے والے لوگوں کو منتشر کردیا جو تشدد میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کررہے تھے اس موقع پر جمع ہونے والے افراد میں زیادہ جواہر لال نہرو یونیورسٹی (جے این یو)کے طلبا ، جامعہ ملیہ اسلامیہ کے ایلومینائی ایسوسی ایشن (اے اے جے ایم آئی ) اور جامعہ کوآرڈینشن کمیٹی کے ارکان شامل تھے۔

اطلاعات کے مطابق طلبا کجروال سے ملنے اور نئی دہلی تشدد کے بارے میں اپنے مطالبات کی فہرست جمع کرنا چاہتے تھے جبکہ پولیس نے طاقت کا استعمال کیا، دوسری طرف کیجریوال نے دہلی میں فوج کی تعیناتی کا مطالبہ کردیا۔


ای پیپر