Sugar mafia's massive financial fraud, money laundering and counterfeiting network revealed
کیپشن:   فائل فوٹو
25 مارچ 2021 (07:47) 2021-03-25

لاہور: فیڈرل انوسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) نے شوگر مافیا کے ایسے بہت بڑۓ نیٹ ورک کا انکشاف کیا ہے جو جعل سازی، منی لانڈرنگ اور مالیاتی فراڈ میں ملوث ہے۔

ایف آئی اے لاہور نے شوگر مافیا کی سرکوبی کیلئے 20 ٹیمیں تشکیل دے دی ہیں۔ کریک ڈائون اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ کے تحت کیا جائے گا۔ تحقیقات کی نگرانی ڈائریکٹر ایف آئی اے لاہور کریں گے۔

حکام نے شوگر سٹّہ مافیا کے سرکردہ ارکان کے اکائونٹس کی چھان بین کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ مقدمات درج کرنے اور گرفتاریوں کا فیصلہ بھی کر لیا گیا ہے۔

ایف آئی اے نے 32 موبائل فونز اور لیپ ٹاپ سے ٹھوس شواہد حاصل کر لئے ہیں۔ شوگر مافیا کا رمضان المبارک میں سٹّہ کے ذریعے قیمتیں مزید بڑھانے کی سازش کا انکشاف بھی ہوا ہے۔

فیڈرل انوسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ اس سٹہ بازی اور ناجائز دولت کمانے میں بڑے بڑے گروپس ملوث ہیں۔

سٹہ مافیا نے ایک سال کے دوران 110 ارب روپے کمائے۔ ناجائز کمائی کو چھپانے کیلئے سینکڑوں خفیہ اور جعلی اکائونٹس کا انکشاف ہوا ہے۔ تمام بڑے شوگر گروپ سٹّہ بازی کی پشت پناہی میں شامل ہیں۔

ایف آئی اے ذرائع کے مطابق مصنوعی قلت اور سٹّہ بازی کے ذریعے چینی کی قیمت کو مسلسل بڑھایا جا رہا ہے۔ ایک سال کے دوران چینی کی مل قیمت کو 70 سے 90 روپے تک بڑھا دیا گیا۔

دوسری جانب خبریں ہیں کہ شوگر مافیا کہ خلاف ایک اور منی لانڈنگ کا مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ یہ مقدمہ شوگر مافیا کے بڑے بڑے بروکرز کے خلاف درج کیا گیا ہے۔

ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ تمام بڑے شوگر گروپ سٹّہ بازی کی پشت پناہی میں شامل تھے۔ بڑے پیمانے پر منی لانڈرنگ کے لئے بے نامی اور جعلی اکائونٹس استعمال کئے جاتے تھے۔


ای پیپر