Source : Yahoo

وفاق کے بعد پنجاب کابینہ حتمی مراحل میں داخل ,اہم فیصلے سامنے آگئے
25 اگست 2018 (18:23) 2018-08-25

چکوال:وفاقی حکومت کا ابتدائی مرحلہ مکمل ہونے کے بعد اب پنجاب کابینہ کا فیصلہ کن مرحلہ شروع ہوگیا ہے ، ضلع چکوال کو وفاقی اور صوبہ پنجاب میں واضح اور فیصلہ کن نمائندگی ملنے کے امکانات روشن ہوگئے ہیں۔

حلقہ این اے65 تلہ گنگ چکوال سے منتخب ہونے والے چوہدری پرویز الہٰی پہلے ہی سپیکر پنجاب اسمبلی منتخب ہوکر اپنی پوزیشن لے چکے ہیں، راجہ یاسر سرفراز کا صوبائی وزارت میں ہائر ایجوکیشن کیلئے نام بول رہا ہے۔ مسلم لیگ ق کے کوٹے میں سے ایم پی اے حافظ عمار یاسر کو اوقاف کا قلمدان ملنے کا امکان ہے۔ ڈاکٹر یاسمین راشد جن کا تعلق ضلع چکوال کے قصبہ نیلہ سے ہے ان کو صوبائی وزیر صحت کا قلمدان ملنے کا امکان ہے۔

جبکہ ایم این اے سردار ذوالفقار علی خان دلہہ کو چیئرمین پارلیمانی کمیٹی اوورسیز کا عہدہ ملنے کے امکانات روشن ہیں۔2013کے انتخابات میں مسلم لیگ ن کے میاں نواز شریف اور شہباز شریف نے انتخابی مہم کے دوران چکوال اور تلہ گنگ کے بڑے انتخابی جلسوں میں تلہ گنگ کو ضلع ، پنجاب یونیورسٹی کے قیام اور 200بستروں کے آرٹ آف دی اسٹیٹ ہسپتال کے قیام کا اعلان کیا تھا، مگر یہ تینوں وعدے پورے نہ ہوسکے اور یہی وجہ ہے کہ مسلم لیگ ن کے قلعے ضلع چکوال کے پندرہ لاکھ عوام نے مسلم لیگ ن کو25جولائی کے الیکشن میں مسترد کردیا۔

موجودہ صورتحال میں یونیورسٹی کا قیام راجہ یاسر سرفراز کا وعدہ ہے جو پورا ہونے کا100فیصد امکان ہے 200بستروں کے آرٹ آف دی اسٹیٹ ہسپتال پر گزشتہ پانچ سالوں میں کاغذوں کے اندر کافی پیش رفت موجود ہے اور ڈاکٹر یاسمین راشد اس کو پورا کرنے کیلئے آگئی ہیں۔ حافظ عمار یاسر کی شکل میں تلہ گنگ کو ضلع کا درجہ ملنے کے امکانات مزید روشن ہوگئے ہیں۔ جبکہ سردار ذوالفقار علی خان دلہہ کو وفاق میں نمائندگی ملنے سے بے شک یہ توقع کی جا سکتی ہے کہ ضلع چکوال کے15لاکھ عوام کی ترقی اور خوشحالی کیلئے یہ تین بڑے میگا پراجیکٹ منظور ہوگئے ، چکوال سوہاوہ روڈ اور چکوال مندرہ روڈ کا کام بھی سوفیصد مکمل ہوگیا تو بے شک ضلع چکوال کا مستقبل تابناک ہے اور سی پیک کے بڑے مثبت اثرات ضلع چکوال کی معاشی اور سیاسی صورتحال پر بھرپور اور مثبت طریقے سے اثر انداز ہونگے۔


ای پیپر