Photo Credit Yahoo

اداروں میں ٹکراﺅ سے ملک اور عوام کا نقصان ہوگا:بلاول بھٹو
25 اپریل 2018 (20:44) 2018-04-25

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ضیاءکی باقیات کیساتھ لڑنے کیلئے مشرف کی باقیات کا ساتھ نہیں دے سکتے،نواز شریف اور عمران خان کیساتھ ملکر کام نہیں کرنا چاہتا دونوں کی سیاست اور سوچ ایک ہے، اداروںمیں ٹکراﺅ سے ملک اور عوام کا نقصان ہوگا ، ملک میں لوٹا ازم کی سیاست کرنے والوں کاکوئی مستقبل نہیں، لوٹاازم جمہوریت کیلئے درست نہیں، پارٹی چھوڑ کرجانے والوں کیلئے پیپلز پارٹی کے دروازے ہمیشہ کیلئے بند ہوگئے.

،پیپلز پارٹی سے جانے والے لوگوں کو دوسری جماعتوں میں وہ عزت نہیں ملی،ن لیگ کا پورے سال کا بجٹ پیش کرنا پری پول دھاندلی اور نئی پارلیمنٹ کی حق تلفی ہوگی،مستقبل میں پیپلز پارٹی نیب قانون کو مزید مضبوط کریگی، انتخابات وقت پر،صاف شفاف اور غیر جانبدار ہوں گے ۔وہ بدھ کو پیپلزپارٹی کے سیکر ٹری جنرل نیئر حسین بخاری کی رہائش گاہ پر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ نیا بجٹ الیکشن کے بعد بننے والی حکومت کا حق ہے، پیپلزپارٹی بھی پورے سال کا بجٹ پیش نہیں کرے گی،ن لیگ صرف آئندہ چند ماہ کا بجٹ پیش کرسکتی ہے، پورا بجٹ پیش کرنا آ  ئندہ حکومت کا کام ہے، بلاول بھٹو نے کہا کہ گزشتہ روز قومی اقتصادی کمیٹی اجلاس سے 3وزراءاعلیٰ نے واک آﺅٹ کیا، جبکہ چوتھا بھی اجلاس میں نہیں تھا، حکومت کو اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرنی چاہیے۔انہوں نے کہا ہے کہ حکومت کے اس پورے سال کا بجٹ پیش کرنے کا میڈیٹ حاصل نہیں۔ انہوں نے کہا کہ بد قسمتی سے ملک میں مسائل پر سیاست نہیں ہورہی ۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں بھی پیپلز پارٹی سے کافی لوگ الگ ہوتے رہے، پیپلز پارٹی میں جوان لوگوں کا مقام تھا ان کو پارٹی چھوڑنے کے بعد وہ مقام نہیں ملا،پیپلز پارٹی سے جانے والے لوگوں کو دوسری جماعتوں میں وہ عزت نہیں ملی.

جانے والے کسی مخصوص شخص پر بات نہیں کرنا چاہتا، ملک میں ٹو ک لوٹا ازم کی سیاست کرتے ہیں انکا کوئی مستقبل نہیں، لوٹاازم جمہوریت کے لیے درست نہیں، اسے نئی نسل نے مسترد کردیا ہے، پارٹی چھوڑ کرجانے والوں کیلئے پیپلز پارٹی کے دروازے ہمیشہ کیلئے بند ہوگئے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ الیکشن میں پاکستان پیپلز پارٹی ہی ہر صوبے میں نظر آئیگی، ان حالات میں نیب قانون کو چھیڑ نا مناسب نہیں اور نیب قانون کو ختم کرنے غلط ہوگا ، پارلیمنٹ کا وقت ختم ہورہا ہے نیب قانون کو اپنے ذاتی مفاد کیلئے نہیں چھیڑنا چاہیے۔ مستقبل میں پیپلز پارٹی نیب قانون کو مزید مضبوط کریگی۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارتی اپنا الیکشن لڑیگی، نواز شریف اور عمران خان کیساتھ ملکر کام نہیں کرنا چاہتا، نواز شریف اور عمران خان کی سیاست اور سوچ ایک ہے۔ اداروں کے ٹکراﺅ سے ملک اور عوام کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا بلکہ نقصان ہوگا ۔ نواز شریف ملکی مفاد میں انتشار کی سیاست چھوڑ دیں،نگران وزیر اعظم کے لیے مشاورت کر رہے ہیں، معاملے پر جلد اچھے نتیجے پر پہنچیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے منشور پر کام جاری ہے.

گزشتہ روز پر بھی پارٹی کے منشور پر تفصیلی اجلاس ہوا۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی میں شامل تمام لوگ ایک خاندان ہیں اگر کوئی ناراض ہے تو ہم خاندان میں رہ کر ان کے مسائل حل کرتے ہیں، میڈیا پر ناراض ارکان کے حوالے سے غلط خبریں چلتی ہیں، بعض اوقات کوئی پارٹی سے نہیں بلکہ پارٹی کسی سے ناراض ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ن لیگ کی سیاست انتہائی گندی ہے، پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی اور وزیر خارجہ کی تعیناتی پاکستان پیپلز پارتی کی جدوجہد کا نتیجہ ہے۔

ہم الزامات اور گالم گلوچ کی سیاست بھی کرسکتے تھے مگر ہم نے مسائل کی سیاست کی ۔ میں عوام کے مسائل حل کرنا چاہتا ہوں اور ہر فرعون کے خلاف لڑنے کو تیار ہوں ۔ ضیاءکی باقیات کیساتھ لڑنے کیلئے مشرف کی باقیات کا ساتھ دینے کیلئے کوئی ضرورت نہیں۔ انہوں نے کہا کہ انتخابات وقت پر ہوں گے،انتخابات صاف شفاف اور غیر جاندار ہوں اور ایک حکومت پرامن طور پر اقتدار دوسری حکومت کو منتقل کریگی۔


ای پیپر