Source : Yahoo

پرویز مشرف نے بھارت کو چھٹی کا دودھ یاد کروا دیا
24 ستمبر 2018 (22:35) 2018-09-24

اسلام آباد:سابق صدر پاکستان اور آل پاکستان مسلم لیگ کے سرپرست اعلیٰ پرویز مشرف نے کہا ہے کہ کچھ بھارتی وزراءاور آرمی چیف پاکستان کے حوالے سے انتہائی غیرذمہ دارانہ بیانات دے رہے ہیں،پاکستان کو ایک کمزور ملک کی طرح لیا جا رہا ہے، بھارتی حکام تباہ کن غلط فہمی کے شکار ہیں،مسلمان اللہ اکبر کہہ دے تو پیچھے نہیں ہٹتا۔ لاشوں کی بے حرمتی کے الزام کی سختی سے تردید کرتا ہوں۔

پیر کو اپنے ایک ویڈیو بیان میں پرویز مشرف نے کہا کہ بھارتی آرمی چیف اور وزراءپاکستان کو ایک کمزور ملک سمجھتے ہوئے انتہائی غیرذمہ دارانہ بیانات جاری کررہے ہیں۔ میں اپنے بیان کے ذریعے بھارت کی یہ غلط فہمی دور کرنا چاہتا ہوں۔اب زمانہ بدل گیا ہے، ہماری فوج پہلے والی نہیں رہی،اب افواج پاکستان ”بیسٹ ان دی ورلڈ“ہیں اور ان کے پاس وسیع تجربہ اور دلیری ہے۔موجودہ بھارتی آرمی چیف سے قبل بھی کچھ لوگ آئے تھے جو پاکستان کے خلاف بھڑکیں مارتے تھے،انہیں منہ کی کھانا پڑی تھی۔

کارگل میںہماری جوابی کاروائی سے بھارت بوکھلا گیا تھا اور بین الاقوامی طور پر آج بھی اس کا رونا روتا ہے۔ 2002میں انہوں نے ساری فوج پاکستان پر حملے کے لئے تیار کرلی تھی۔حتیٰ کہ بنگلہ دیش اورچین کی سرحدوں سے بھی فوج ہٹا لی تھی۔جواب میں ہم بھی تیار ہو گئے اور کھلے عام اعلان کردیا کہ اگر بھارت حملہ کرے گا تو بھرپور جواب دیا جائے گا۔دس ماہ تک یہ صورتحال رہی اور بالآخر بھارت پیچھے ہٹ گیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم مسلمان ہیں اور بھارتی حکام کو یہ سمجھنا چاہئےے کہ 22کروڑ پاکستانی ،بیس کروڑ ہندوستانی اور کشمیری مسلمان مل کر اللہ اکبر کا نعرہ لگائیں تو بھارت کا کیا بنے گا۔

مسلمان جب اللہ اکبر کا نعرہ لگا دیتا ہے تو پیچھے نہیں ہٹتا۔ہمارے پاس اتنی طاقت ہے کہ کسی بھی بھارتی جارحیت کا منہ توڑ جواب دے سکیں۔بھارتی وزیراعظم ہندوراج پر یقین رکھتے ہیں اور مسلمانوں کو مار کر سیاسی مقاصد حاصل کرنا چاہتے ہیں۔اب ان کی یہ ترکیب ناکام ہوگی کیونکہ بھارتی عوام بھی باشعور ہوچکے ہیںجو اس نظریئے پر یقین نہیں رکھتے۔انہوں نے ہلاک شدہ بھارتی فوجیوں کی لاشوں کی بے حرمتی کے الزام کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی فوجی تو ایسا کر سکتے ہیں مگر ہم مسلمان ایسا نہیں کرسکتے۔ انہوں نے کہا کہ میں جانتا ہوں کہ ایسی خبریں لائن آف کنٹرول پر بیٹھے جوان اپنے مقاصد کے لئے پھیلاتے ہیں جس پر حکام بیانات دیتے ہیں۔


ای پیپر