آیا صوفیہ مسجد اللہ اکبر کے نعروں سے گونج اُٹھی ،تاریخی اعلانات
24 جولائی 2020 (19:04) 2020-07-24

استنبول : آیا صوفیا مسجد میں نماز جمعہ کے تارخی لمحات کے موقع پر ترک صدر جب اردگان کی جانب سے قرآن پاک کی تلاوت کی گئی۔

تفصیلات کے مطابق استنبول کی تاریخی مسجد آج اللہ اکبر کی صداؤں سے گونج اٹھی ہے۔استنبول کی شہرہ آفاق عمارت آیا صوفیہ کو گرینڈ مسجد میں منتقل کردیاگیا۔ترکی میں 86 سال بعد تاريخی مسجد "آيا صوفيہ" ميں نمازِ جمعہ کی ادائيگی کی گئی جس میں صدر رجب طیب اردگان سمیت حکومتی عہدے داران اور شہریوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

مسجد آیا صوفیہ کے باہر بھی ہزاروں افراد کا اجتماع دیکھنے میں آیا۔ نمازجمعہ کی ادائیگی کے لیے ہزاروں افراد جمع ہوئے۔ ترک صدرطیب اردوان نے بھی قرآن پاک کی تلاوت کی جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو چکی ہے،۔جب کہ آیا صوفیہ کے اردگرد گلیاں بھی لوگوں سے بھر گئیں۔ ۔ آیا صوفیا مسجد میں نماز جمعہ کی ادائیگی کے لیے لوگ جمع ہوئے۔

مسجد کے اطراف میں ہزاروں لوگ موجود تھے۔ کوئی بھی اس تاریخی موقع سے محروم نہیں ہونا چاہتا۔اور اس طرح آج 86 سال بعد آیا صوفیہ میں لوگ اپنے رب کے حضور سجدہ ریز ہوئے۔لوگوں کی ایک کثیر تعداد نماز جمعہ کیلئے موجود تھی۔ دنیا بھر سے میڈیا کے نمائندے لائیو کوریج کیلئے موجود رہے۔

ترک صدر رجب طیب اردوان نے ٹویٹر پیغام کے ساتھ ایک ویڈیو جاری کی جس میں انہوں نے اپنے پیغام میں لکھا کہ اے آیا صوفیہ،ہوائیں لہراتی رہیں گنبد پر آزادی سے، تم ازل سے ہو ہماری اور ہم ہیں تمہارے۔

ویڈیو میں بوسنیا، البانیا، آزربائیجان، کرد، سواحلی، عربی، بنگالی اور ترکی زبان میں گلوکاروں نے مسجد کے لیے تعریفی اشعار پڑھے۔دس جولائی کو ترکی کی سب سے اعلی انتظامی عدالت کونسل آف اسٹیٹ نے آیا صوفیہ کو سلطان محمد فاتح فانڈیشن کے حق میں فیصلہ دیتے ہوئے 1934 کے فیصلے کو منسوخ کر دیا۔ فیصلے میں کہا گیا کہ اسے مسجد کے علاوہ کسی اور مقصد کے لئے استعمال نہیں کیا جا سکتا۔ یہ عمارت چھٹی صدی میں تعمیر کی گئی تھی۔


ای پیپر