فوٹوبشکریہ فیس بک

این اے 60 کے انتخاب کا التوا، شیخ رشید کی اپیل مسترد
24 جولائی 2018 (16:58) 2018-07-24

 لاہور: سپریم کورٹ کے فل بینچ نے عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کی استدعا مسترد کرتے ہوئے واضح کیا کہ این اے 60 میں عملی طور پر کل انتحابات کا انعقاد ممکن نہیں اسلیے اجازت نہیں دی جا سکتی۔

شیخ رشید کے وکیل نے دلائل میں مؤقف اختیار کیا کہ کسی امیدوار کو سزا ہونے کی صورت میں الیکشن ملتوی نہیں ہوتے جیسے مریم اور صفدر کو سزا ہوئی لیکن اس حلقے میں الیکشن ہو رہے ہیں اسی طرح حنیف عباسی کو سزا دی گئی اس پر الیکشن ملتوی کرنا جائز نہیں۔

شیخ رشید کے وکیل نے استدعا کی کہ جس طرح باقی حلقوں میں الیکشن ہو رہے ہیں عدالت این اے 60 میں بھی الیکشن کا حکم جاری کرے اور الیکشن کمیشن کا حکم مسترد کر دے۔

یہ خبر بھی پڑھیں:این اے 60 کا معاملہ، سپریم کورٹ نے شیخ رشید کی درخواست سماعت کیلئے مقرر کرلی

 

عدالت نے شیخ رشید کے وکیل کی استدعا مسترد کر دی اور این اے 60 میں انتخابات پر کوئی حکم امتناع بھی جاری نہیں کیا۔ عدالت نے شیخ رشید کے وکیل کے دلائل مکمل ہونے پر فیصلہ سناتے ہوئے انتخاب کے التوا کے خلاف دائر درخواست کو مسترد کر دیا۔

 

یہ خبر بھی پڑھیں:فاسٹ باﺅلر محمد عرفان کس بڑی سیاسی جماعت کے حمامی نکلے؟ خبر آگئی

یاد رہے کہ حلقہ این اے 60 سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار حنیف عباسی کو ایفیڈرین کیس عمر قید کی سزا کے بعد الیکشن کمیشن نے حلقے میں انتخاب ملتوی کردیا تھا جسے شیخ رشید نے گزشتہ روز لاہور ہائیکورٹ کے راولپنڈی بینچ میں چیلنج کیا اور ساتھ ہی انہوں نے سپریم کورٹ میں بھی درخواست جمع کرائی۔

بعدازاں لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ کے جسٹس مجاہد مستقیم نے الیکشن کمیشن کا فیصلہ برقرار رکھتے ہوئے شیخ رشید کی درخواست مسترد کر دی تھی۔

 

 


ای پیپر