PTI Government, letters, US administration, Afghan peace process, Shah Mehmood Qureshi
24 جنوری 2021 (14:00) 2021-01-24

ملتان: وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ پاکستان افغانستان میں امن و استحکام چاہتا ہے ، افغانستان امن عمل کے حوالے سے نئی امریکی انتظامیہ کو خطوط لکھے ہیں۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ امریکا کی نئی حکومت سے پاکستان کے تعلقات بہتر کریں گے ، حکومت نئی سوچ اور ترجیحات کے ساتھ امریکا سے بات کرے گی۔ نئی امریکی انتظامیہ دیکھے گی بھارت بدل گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی میں اسرائیل نامنظور ریلی نکالی گئی ، ریلی نکالنے والے یہ تو بتائیں اسرائیل کو منظور کس نے کیا ، انہوں نے واضح کیا کہ پاکستان نے اسرائیل کو تسلیم نہیں کیا اور نہ اس کا ارادہ ہے۔ مسئلہ فلسطین سے متعلق پاکستان کی پالیسی واضح ہے ، عمران خان پہلے وزیراعظم ہیں جو ان کے سامنے گھٹنے ٹیکنے کو تیار نہیں۔

براڈ شیٹ پر گفتگو کرتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہ براڈشیٹ سے متعلق معاہدے میں پی ٹی آئی کا کوئی عمل دخل نہیں ، براڈ شیٹ معاہدے کا معاملہ حکومت کو ورثے میں ملا ، شیخ عظمت سعید بہت باعزت جج رہے ہیں ، مسلم لیگ ن کا دامن اگر صاف ہے تو انہیں کس چیز کی پریشانی ہے۔ اپوزیشن کو تنقید کے بجائے اپنی صفائی پیش کرنی چاہئے۔ اپوزیشن کو تمام معاملات کا سامنا کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے الیکشن کمیشن میں تمام ڈونرز کی تفصیلات دی ہیں۔ پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس میں گھبراہٹ کا شکار نہیں۔

انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایم جماعتوں میں اتحاد دکھائی نہیں دیتا ، پی ڈی ایم جماعتوں میں یکسوئی نہیں رہی ، یہ لوگ بہت جلد بکھر جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف عدم اعتماد کی تحریک کو شکست دینے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ وزیراعظم کو پاکستان کی عوام نے منتخب کیا ہے۔ اب انہیں الیکٹڈ وزیراعظم کو سلیکٹڈ کہنا بند کر دینا چاہئے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ آٹے اور چینی کی قیمتوں میں استحکام کیلئے حکومت ٹھوس اقدامات کر رہی ہے۔ ہم مہنگائی جیسے چیلنج کا سامنا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چینی مافیا کے گٹھ جوڑ سے قیمتیں پھر بڑھ رہی ہیں ، گیس ، بجلی ، پٹرول کی قیمت بڑھ جانا حکومت کیلئے چیلنج ہے۔ ماضی کی حکومت گیس کی قیمتوں میں اضافے کی ذمہ دار ہے۔


ای پیپر