maryam nawaz,daska,na-75,senate elections,reality,fake government
24 فروری 2021 (14:19) 2021-02-24

لاہور : مسلم لیگ(ن) کی نائب صدر مریم نواز شریف نے کہا ہے کہ سینٹ الیکشن سے متعلق قانون میں ترمیم  جعلی حکومت نہیں پارلیمنٹ کر سکتی ہے۔سینٹ الیکشن سے متعلق میرا اصولی موقف ہے۔میں نے بلاول بھٹو کو کل بنچ پر مدعو کیا ہے۔میرے پاس حقائق ہیں میں چاہتی ہوں کہ یہ خود سچ بتا دیں اور شرمندگی سے بچ جائیں۔ ورنہ وہ حقائق مجھے عوام کے سامنے لانا پڑیںگے کہ کس طرح 20 میں سے چند پریذائیڈنگ آفیسرز کو پوری رات گاڑیوں میں گھمایا گیا اور باقیوں کو  ڈیرے پر لے جا یا گیا اور وہاں پی ٹی آئی کا کون کون سا رکن موجود تھا اور کس کس ایجنسی کا رکن موجود تھا۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز شریف نے کہا کہ پولنگ تو پانچ بجے بند ہو جاتی ہے لیکن یہ کون سی ایسی جگہ ہے جہاں پوری رات پولنگ چلتی رہی اور پولنگ کی ریشو صبح تک ہی 88 پر پہنچ گئی۔اس کو ایک وسیع تناظر میں دیکھنا پڑے گا۔صبح سے انہوں نے منظم دھاندلی کی۔پورے ڈسکہ میں مسلم لیگ(ن) کی پوزیشن بہت مستحکم ہے۔انہوں نے بڑی چالاکی کے ساتھ پہلے فائرنگ کر کے ووٹرز کو ہراساں کیا۔ووٹنگ کا سب سے پہلا اصول یہ ہوتا ہے کہ جس بھی پارٹی کو ووٹ دینا چاہیے ہیں ووٹرز کو یہ حق آزادانہ استعمال کرنے  دیا  جائے۔

انہوں نے کہا کہ  ووٹرز کا بنیادی حق ان سے چھینا گیا ٗ انہیں خوف و ہراس کا نشانہ بنایا گیا۔اوراسی ماحول میں ووٹ ڈالنے پر مجبور کیا گیا۔جب ڈسکہ کی عوام کا جوش و خروش کم نہ ہوا تو انہوں نے پولنگ سٹیشنز کو بند کر دیا۔چھ چھ گھنٹوں تک پولنگ سٹیشنز کو بند رکھا گیا۔ میں نے وہ تمام ویڈیو اپنے سوشل میڈیا اکائونٹ سے عوام تک پہنچائیں۔عوام دروازہ توڑ رہی ہے کہ پولنگ سٹیشن کا دروازہ کھولو اور دروازہ بند ہے۔جب اندر وہ دروازہ توڑ کر داخل ہوئے تو سارے پریذائیڈنگ آفیسرز خالی بیٹھے ہوئے تھے ۔

مریم نواز شریف نے کہا کہ ڈسکہ کی گلیوں میں دور دور تک شیر کے ووٹرز تھے  جن کو جان بوجھ کر پولنگ کے عمل سے دور رکھا گیا۔ پھر وہ ووٹنگ کے تھیلے ہی لے کر بھاگ گئے۔ ایک پریذائیڈنگ آفیسر تصدق حسین نے گواہی دی ہے کہ ہمیں زبردستی کہا جا رہا تھا کہ الیکشن کمیشن کی گاڑی میں نہیں  بلکہ  دوسری گاڑی میں بیٹھو اور اغوا ہو جائو۔ اسی طرح پی ٹی آئی کا ایک کارندہ ووٹ کا تھیلا چوری کر کے فرار ہوتے ہوئے پکڑا گیا ہے۔ یہ سب ویڈیوز عوام کے سامنے ہیں۔


ای پیپر