پاکستانی قوم کشمیریوں سے یکجہتی کا دن منائے گی : فردوس عاشق
24 اگست 2019 (17:14) 2019-08-24

لاہور:وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ وزیراعظم اس ہفتے قوم سے خطاب کریں گے ، پوری پاکستانی قوم ایک دن کشمیریوں سے یکجہتی کا دن منائے گی، جس میں سارے مل کر ایک پیغام دیں گے، وزیراعظم کا انقلابی ٹریک پیغام پلانٹ کار پاکستان، کلین گرین پاکستان ہے، سربراہ پاکستان وزیراعظم کا انقلابی پروگرام ہے، درخت لگانا صدقہ جاریہ ہے، اس مہم کو کامیاب بنانا ہے، پاکستانی عوام بھی اس مہم میں آگے بڑھ چڑھ کر حصہ لے رہی ہے، مقبوضہ کشمیر کے ساتھ یکجہتی کیلئے ملک کے ہر کونے میں اور ہر فرد ریلیوں میں حصہ لے رہا ہے، عمران خان کشمیر کاز کو سپورٹ کرنے کیلء فوکل کمیٹی تشکیل دی ہے، جس کی ہر ہفتے میٹنگ ہو رہی ہے۔

 ہفتہ کو لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ طترجیحات پر عملدرآمد کر رہے ہیں، وزیراعظم اس ہفتے قوم سے خطاب بھی کریں گے اور اسی ہفتے قومی یکجہتی کا دن منایا جائے گا، قومی یکجہتی کا دن کشمیریوں کے نام ہو گا، مقبوضہ کشمیر میں 20 دن سے کرفیو ہے، پوری دنیا سے لینڈ لاک اور مواصلات نظام بند ہونے سے عام عوام معلومات سے محروم ہیں، سوشل میڈیا تک بھی رسائی نہیں ہے اور نہ ہی کوئی بین الاقوامی میڈیا وہاں جا کر حقائق سے آگاہی نہیں کر سکتا۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں ہمارے پرچم کا سفید رنگ بھی اتنا ہی عزیز ہے جتنا ہمیں اپنے پرچم کا سبز رنگ عزیز ہے، پاکستان میں موجود عیسائی، ہندوئوں، سکھ اور تمام دیگر غیر مسلم کمیونٹی نے مل کر کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا ہے، پسے ہوئے اور کشمیری بھائیوں کا ساتھ دیا ہے، کشمیر اپنا جمہوری حق خود ارادیت دنیا سے مانگ رہا ہے لیکن دنیا بالکل خواب خرگوش کے نشے میں ہے اور وہ بیدار ہونے کو تیار نہیں ہے، وہ انٹرنیشنل ادارے جو انسانی حقوق کے چیمپیئن بنتے ہیں ان کو ایک مرتبہ پھر بآور کرنے کی ضرورت ہے، بھارت مقبوضہ کشمیر میں جو نسل کشی کرنے جا رہا ہے اس پر وزیراعظم عمران خان بار بار دنیا کو آگاہ کر رہے ہیں، پاکستان کی حکومت سمجھتی ہے کہ ملک میں اقلیتوں کا بھی اتنا ہی حق ہے جتنا اکثریت کا ہے، پاکستان میں موجودہ اقلیتوں کے مذہبی مقامات ہمیں عزیز ہیں، بھارت شش و پنج کا شکار ہے اور بھارت میں موجود سکھوں کو ان کا حق دینے سے بھی گریزاں ہے۔

فردوس عاشق نے کہا کہ بھارت میں بننے والی تمام اقلیتیں آر ایس ایس کی ہندوٹولی نظریہ کی قیدی ہے جس میں مسلمان سب سے زیادہ زیر عتاب ہے۔کرتار پور راہداری سکھوں کا بنیادی حق ہے، پاکستان یہ سمجھتا ہے کہ سکھ کمیونٹی کا قانونی ،اخلاقی ، بنیادی حق ہے کہ وہ اپنے مذہبی مقامات میں جا سکیں، کرتار پور راہداری شیڈول کے مطابق افتتاح کریں گے، بھارت کو بھی کرتار پور کوریڈور پر سکھوں سے ہمدردی کرتے ہوئے کام میں تیزی لانی چاہئے، کرتار پور میں اب کام بھارت کی جانب سے رہتا ہے،پاکستان اب کھلے دروازوں سے سکھ بھائیوں کو خوش آمدیدکہیں گے،حالات کوئی بھی جنگ ہو یا امن سکھ برادری کے یہ مقامات بند نہیں ہوں گے،سکھوں کے ساتھ تعلقات میں بہتری لائیں گے،اگر بھارت نے جنگ ہمارے سر پر تھوپی تو پاکستان کا ہر بچہ افواج پاکستان کے ساتھ کھڑا ہوگا،بچہ بچہ قوم کا سپاہی بن کر اس جنگ کو دلی میں جا کر ختم کریں گے ،یہ جنگ سرینگر یاجموں میں ختم نہیں ہوگی ،دلی میں جا کر ختم ہو گی۔


ای پیپر