محمد حفیظ کو پاور ہٹنگ کا خیال کب اور کیسے آیا اور پھر انہوں نے کس طرح پریکٹس کی؟ نوجوان کرکٹرز کو مفید معلومات دیدیں
سورس:   فوٹو: بشکریہ ٹوئٹر
23 فروری 2021 (19:00) 2021-02-23

کراچی:  پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) میں کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے خلاف شاندار اننگز کھیلنے والے محمد حفیظ کا کہنا ہے کہ مجھے 2019ءکے ورلڈکپ میں احساس ہوا کہ ہم پاکستانی پاور ہٹنگ نہیں کرتے اور جب ویسٹ انڈیز میں لیگ کھیلنے گیا تو معلوم ہوا کہ وہ سب کیوں اتنے زبردست چھکے مارتے ہیں۔  

تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے محمد حفیظ نے کہا کہ 2019ءمیں یہ سوچا کہ ہم باقی ٹیموں سے پیچھے کیوں رہ جاتے ہیں کہ وہ 325 سے 350 تک بھی آرام سے سکور بنا لیتی ہیں لیکن ہم آج بھی 260 سے 270 رنز پر پھنسے رہتے ہیں جبکہ ورلڈکپ 2019ء کے دوران شدت سے اس بات کو محسوس کیا کہ ہم پاکستانی اپنی تکنیک پر  تو بہت کام کرتے ہیں لیکن پاور ہٹنگ کی پریکٹس بالکل بھی نہیں کرتے، میں جب کیریبین پریمیر لیگ (سی پی ایل) کھیلنے کیلئے ویسٹ انڈیز گیا تو دیکھا کہ وہاں جتنے بھی کھلاڑی ہیں وہ چھکے مارنے کی پریکٹس بہت زیادہ کرتے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ وہ لمبے لمبے چھکے بھی مارتے ہیں۔  

 سینئر آل راؤنڈر نے کہا کہ یہ سب دیکھ کر اس نتیجے پر پہنچا کہ مجھے اپنی گیم میں مزید بہتری لانے کیلئے پاور ہٹنگ پر کام کرنا ہو گا اور پھر میں نے پریکٹس شروع کر دی جس دوران  تکنیکی رینج کے ساتھ پاور ہٹنگ کو بڑھایا، اس ضمن میں گالف سے مجھے بہت فائدہ پہنچا کیونکہ گالف کھیلنے سے معلوم ہوا کہ آپ کا وائیڈر پیس ہونا اور گیند کو آخر تک دیکھنا کتنا اہم ہوتا ہے اور ویسے بھی یہ کرکٹ کیساتھ ملتی جلتی ہے، اس لئے میں گالف کھیلتا رہتا ہوں تاکہ بیٹ سوئنگ کیساتھ دیگر معاملات کی پریکٹس بھی ہو سکے۔


ای پیپر