سوشل میڈیا کو بھی ریگولیٹ کرنے کا پلان ہے :فواد چوہدری
22 نومبر 2018 (17:37) 2018-11-22

اسلام آباد :وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ میڈیا کااس وقت بنیادی مسئلہ اس کا اسٹرکچر ہے، ہمیں انٹرنیشنل ریگولیشنز کی طرف جانا ہے، کوشش کر رہے ہیں کہ سوشل میڈیا کو ریگولیٹ کریں، ہمارے میڈیا کا مقابلہ ترقی یافتہ ممالک سے ہوتا ہے، پاکستان میں میڈیا کو آزادی ترقی یافتہ ممالک کی طرح حاصل ہے۔

جمعرات کوقومی سلامتی و تعمیر اور ذرائع ابلاغ ٍکے موضوع پر سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ ہم اپنے میڈیا کا مقابلہ ترقی یافتہ ممالک سے کر رہے ہیں، میڈیا کو سب سے بڑا خطرہ میڈیا اونر کے بزنس ماڈل سے ہے، ملک کی معاشی صورتحال سب کے سامنے ہے، نجی میڈیا کو اپنے بزنس ماڈل بنانے ہوں گے، فیس بک اور گوگل دنیا کی دو بڑی ٹیکنالوجیز ہیں، انٹرنیٹ کی بڑھتی ہوئی سپیڈ کے باعث 10سال بعد میڈیا کی شکل مختلف ہو گی، ہمیں انٹرنیشنل ریگولیشنز کی طرف جانا ہے، سوشل میڈیا ریگولیٹ کرنے کےلئے عالمی اداروں سے بات کر رہے ہیں.

دنیا جس ٹیکنالوجی کے انقلاب سے گزر رہی ہے، ہمیں اس کے ساتھ چلنا ہے، پیمرا کو ختم کر کے پاکستان میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی بنا رہے ہیں، ماس کمیونیکیشن ڈیپارٹمنٹس کو بھی مستقبل کے بارے میں پالیسیاں مرتب کرنا ہوں گی، واٹس ایپ کے آنے سے ایس ایم ایس سروس معدوم ہو گئی،ماضی کی حکومتوں نے اشتہارات کا بے دریغ استعمال کیا، اشتہارات پر 10 ارب کا سالانہ خرچہ ہونا چاہیے جسے 35ارب تک پہنچایا گیا، میڈیا کا اس وقت بنیادی مسئلہ اس کا اپنا اسٹرکچر ہے۔ وفاقی وزیراطلاعات فواد چودہدری نے کہا کہ کرتارپورسرحد کھولنے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں۔

کرتار پور سرحد کا سب سے زیادہ فائدہ سکھ کمیونٹی کو ہوگا۔ کرتارپور بابا گرونانک کی جائے پیدائش بھی ہے۔ پاکستان خطے میں امن کی بات کرتا ہے ۔ بھارت اور افغانستان دونوں کے ساتھ امن کے خواہاں ہیں۔ امن کی خواہش کے بیش نظر پاکستان نے یہ تجویز دی تھی۔


ای پیپر