سڑک بنانے کا معاملہ،چیف جسٹس کے نوٹس لینے پر اسحاق ڈار نے حقائق واضح کر دئیے
22 مارچ 2018 (23:08) 2018-03-22

لندن: سابق وزیرخزانہ سینیٹر اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ ڈائریکٹر جنرل لاہور ڈویلمپنٹ اتھارٹی (ڈی جی ایل ڈی اے) نے خود کہا تھا کہ وہ میرے گھر کے سامنے سڑک چوڑی کرنا چاہتے ہیں۔ اسحاق ڈار نے کہا کہ ڈی جی ایل ڈے اے نے جب مجھ سے کہا کہ وہ میرے گھر کے سامنے والی سڑک چوڑی کرنا چاہتے ہیں تو میں نے ڈی جی سے کہا کہ مجھے تو اعتراض نہیں لیکن آپ چاہیں تو قریبی مکینوں سے پوچھ لیں۔نجی ٹی وی سے گفتگو میں اسحاق ڈار نے کہا کہ ڈی جی ایل ڈی اے نے غلط بیانی کی کہ میں نے انہیں فون کیا تھا، عدالت کوتمام حقائق اکھٹے کرنا چاہیے تھے، ڈی جی ایل ڈی اے کو میں نے کبھی زبانی حکم نہیں دیا،ایل ڈی اے کیا فون پر چلتاہے؟ میں نے تو کبھی کسی کو کام نہیں کہا۔

چیف جسٹس پاکستان نے سابق وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے زبانی حکم پران کے گھر کے باہر پارک ختم کرکے سڑک چوڑی کرنے پرڈی جی ایل ڈی اے پر سخت برہمی کا اظہار کیا ہے۔سپریم کورٹ لاہوررجسٹری میں چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے اسحاق ڈارکی رہائش گاہ کے لیے پارک ختم کرکے سڑک بنانے پراز خود نوٹس کی سماعت کی، سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ڈی جی لاہور ڈیولپمنٹ اتھارٹی سے استفسار کیا کہ کس کے کہنے پر آپ نے پارک کو اکھاڑ کرسڑک بنائی، ڈی جی ایل ڈی اے نے بتایا کہ اسحاق ڈارنے پارکنگ کے لیے سڑک کھلی کرنے کی درخواست کی تھی، چیف جسٹس پاکستان نے استفسار کیا کہ کیاآپ کو اسحاق ڈارنے تحریری طور پر درخواست دی تھی، ڈی جی ایل ڈی اے نے بتایا کہ اسحاق ڈار نے فون کرکے سڑک بنانے کا کہا تھا۔


ای پیپر