نیب کے ذریعے ملک میں سیاسی انجینیئرنگ ہو رہی ہے :ن لیگ
22 جولائی 2020 (20:41) 2020-07-22

اسلام آباد:سابق وزیراعظم وپاکستان مسلم لیگ( ن)کے سینئر نائب صدر شاہد خاقان عباسی اور دیگر رہنمائوں نے کہا ہے کہ خواجہ سعد رفیق اور ان کے بھائی سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے میں نیب کے بارے میں جو کہا گیا ہے، ایسا کسی ادارے کے بارے میں کہا جائے تو اس کا وجود نہیں رہتا، نیب کے ذریعے ملک میں سیاسی انجینیئرنگ کی کوشش کی جارہی ہے۔

منگل کو مسلم لیگ ( ن)کی اعلیٰ قیادت نے پریس کانفرنس کی جس میں شاہد خاقان، احسن اقبال اور خواجہ آصف بھی موجود تھے۔پریس کانفرنس کے دوران شاہد خاقان عباسی کا خواجہ سعد رفیق کے کیس سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے پر کہنا تھا کہ ملک میں احتساب کے تماشے کا کھوکھلا پن سامنے آگیا ہے۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ نے وہ باتیں لکھ دیں جو ہم کر رہے تھے، نیب اور حکومت مل کر فیصلہ کرلیں کہ اس ادارے کو ختم کریں، سپریم کورٹ کے فیصلے میں نیب کے بارے میں جو کہا گیا ہے، ایسا کسی ادارے کے بارے میں کہا جائے تو اس کا وجود نہیں رہتا۔

ان کا کہنا ہے کہ نیب اپوزیشن کو تو پکڑتا ہے لیکن اسے حکومتی ارکان کے کرپشن اسکینڈل نظر نہیں آتے، اپوزیشن کو سالوں جیل میں رکھا جاتا ہے، فیصلے میں واضح بات لکھ دی گئی ہے کہ نیب ملک کے مفاد میں نہیں ہے۔شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نیاپنے فیصلے میں نیب کی حقیقت لکھی ہے، یہ معاملہ اس کیس کانہیں ہے بلکہ ہر کیس میں یہی حالت ہے، اعلی عدلیہ نے نیب کی حقیقت کو بے نقاب کردیا، حکومت سپریم کورٹ کا فیصلہ پڑھے اورچلو بھرپانی میں ڈوب مرے۔

اس موقع پر خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ خواجہ سعد رفیق کیس میں انصاف کا بول بالا ہوا ہے، مستقبل میں اس فیصلے کی گونج باقی رہے گی اور انصاف کی کتابوں میں انصاف کے طلبگار اس فیصلے کا حوالے دیں گے۔انہوں نے کہا کہ خواجہ برادارن کو خراج تحسین پیش کرتا ہوں جنہوں نے موجودہ نظام کے خلاف صعوبتیں برداشت کیں اور اپنے قائد کے ساتھ کھڑے ہیں، یہ ایسے عمل کا آغاز ہے جو شہادت دے رہا ہے کہ آنے والے وقت میں انصاف کا بول بالا ہوگا، حکمران جب انا کے لیے ادارے استعمال کرتے ہیں تو کسی دن انصاف کا بول بالا ضرور ہوتا ہے۔مسلم لیگ ( ن) کے جنرل سیکرٹری احسن اقبال کا کہنا تھا کہ اس حکومت کو گھر بھیجنا ملک کو آئین اور قانون کے مطابق چلانے کے لیے ضروری ہو گیا ہے۔


ای پیپر