Federal Minister, Shibli Faraz, change, IG Sindh, PTI, PPP government
22 فروری 2021 (15:45) 2021-02-22

اسلام آباد: وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز نے آئی جی سندھ کی تبدیلی کا عندیہ دے دیا ، ساتھ ہی حلیم عادل شیخ کی فوری رہائی کا مطالبہ بھی کر دیا۔

پریس کانفرنس میں شبلی فراز نے کہا کہ حلیم عادل شیخ کو دہشت گردوں کے ساتھ رکھا گیا ہے ۔ حلیم عادل شیخ کے ساتھ کیا گیا برتاؤ قابل برداشت نہیں ۔

انہوں نے کہا کہ سندھ میں دھونس اور دھمکی کا کلچر بنایا گیا ہے ، سندھ حکومت پولیس کا غلط استعمال کر رہی ہے۔ اگر آئی جی سندھ زیادتی کر رہے ہیں تو ہم ان کی تبدیلی پر غور کریں گے۔

سینیٹ الیکشن میں بات کرتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہا کہ زرداری کا گیلانی کی کامیابی کا دعویٰ خرید و فروخت پر مہر ثبت کر رہا ہے۔

سیاست اور سیاستدان بدنام ہونے کا سہرا پاکستان پیپلز پارٹی اور ن لیگ کے سر ہے ، دونوں جماعتیں جمہوریت کے نام پر میثاق کرکے اس سے منحرف ہوئیں۔

دوسری جانب حلیم عادل حکومت کو برا بھلا کہتے تھکتے نہیں تھے ، سندھ حکومت نے حلیم عادل شیخ کو ہسپتال منتقل کیا ، حلیم عادل کو ان کی مرضی کے ہسپتال میں منتقل کیا گیا۔

اس شخص کے خلاف ہوتے تو اسے لاک اپ کر سکتے تھے۔ حلیم عادل ، خرم شیر این آئی سی وی ڈی کو برا کہتے تھے ، جب برا وقت آیا تو این آئی سی وی ڈی کے لیے لکھ کر دیا۔

انہوں نے کہا کہ گورنر صاحب خبروں میں آنے کے لیے باتیں کرتے ہیں ، گورنر صاحب کو سیف ابڑو کے بارے میں سوچنا چاہیے۔


ای پیپر