سی پیک کے مکمل ہونے میں ابھی وقت لگے گا :اسد عمر
21 جنوری 2020 (21:31) 2020-01-21

اسلام آباد:وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کہا ہے کہ سی پیک کے تحت بنائے جانے والے روڈز ابھی تک گوادر بندرگاہ کے ساتھ منسلک نہیں ہوئیں، اس کے علاوہ گوادر میں صنعتیں لگنے میں وقت لگے گا۔

وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کل پاکستان چیمبرز کے صدور کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بطور وزیر خزانہ وہ آٹھ چیمبرز میں گئے، تاجروں ننانوے فیصد سوالات ایف بی آر سے متعلق تھے، انہوں نے زور دیا کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کی ضرورت ہے تاکہ ڈویلپمنٹ کو بڑھایا جائے، پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ اتھارٹی بنی تھی مگر رولز نہیں تھے اور سی او نہ ہو نے کی وجہ سے یہ فعال نہ ہو سکی تھی، موجودہ حکومت نے پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ اتھارٹی کا سی ای او لگایا ہے، رولز بنائے جارہے ہیں تاکہ اس اتھارٹی کو فعال بنایا جائے.

وفاقی وزیر اسد عمر کے سی پیک اور اس بارے پالیسی پر تاجروں کو سوالات کی دعوت دینے پر تاجروں نے سی پیک کے حوالے حکومت کی کارکردگی پر شدید تنقید کی، صدر گوادر چیمبر نے اس موقع پر کہا کہ حکومت سی پیک پر بات بہت کرتی ہے مگر عمل کچھ نہیں کرتی، گوادر کی شاہراہوں کے منصوبے پی ایس ڈی پی میں موجود ہیں، مگر کام نہیں ہورہا نہ پیسے جاری ہورہے ہیں، گوادر میں گرڈ سے کنکٹیویٹی کا مسئلہ ہے، چائنیز سے بات ہوئی ہے وہ تیار ہیں مگر پی ایس ڈی پی میں فنڈ ہوتے ہوئے فنڈز جاری نہیں ہورہے.

انہوں نے کہا کہ کوئی انگریز پاکستان آتا ہے تو اسے بلوچستان، گوادر آنے کا ویزہ اور این او سی نہیں دیتے، وفاقی وزیر اسد عمر نے کہاکہ سی پیک کے روڈز کی گوادر کے ساتھ کنکٹیویٹی پر کام کررہے ہیں، گوادر میں انڈسٹری لگنے میں ٹائم لگے گا، اس سے پہلے گوادر گرڈ کی نیشنل گرڈ سے کنیکٹیویٹی کرنا پڑے گی، اس کے بغیر بجلی سپلائی مشکل ہے، اس کیلئے منصوبے کی منظوری ہوچکی ہے، وفاقی وزیر نے کہا کہ سی پیک کے ارلی ہارویسٹف کے 29 ارب ڈالر کے منصوبے ہیں، منرل کی اونر شپ صوبوں کے پاس ہے وفاق نے سہولیات دینا ہے، منرل سیکٹر میں بہت صلاحیتیں ہیں، اسد عمر نے کہا کہ جہاں تک ریکوڈک پراجیکٹ بارے لڑائی کی بات ہے تو وہ مداخلت سیاسی قیادت کی طرف سے نہیں ہوئی، یہ مداخلت جوڈیشری کی طرف سے تھی۔


ای پیپر