Image Source : SOP Website

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے آتے ہی بڑا اعلان کر دیا
21 جنوری 2019 (18:46) 2019-01-21

اسلام آباد: چیف جسٹس آصف سعید خان کھوسہ نے کہا ہے کہ دو سے تین ماہ میں تمام زیر التوا فوجداری اپیلیں نمٹا دینگے، تین ماہ بعد جو فوجداری اپیل آئے گی ساتھ ہی مقرر ہوجائے گی،عدالتی نظام میں بڑے پیمانے پر تبدیلیاں نظر آنے لگ گئی ہیں،قتل کے مقدمات کا فیصلہ بھی اب 14 سے 15 سال کی بجائے صرف 4 سے 5 سال کے اندر آنے لگے ہیں۔

  چیف جسٹس نے کہاکہ 2014 میں ہونے والے واقعہ کا فیصلہ آج سپریم کورٹ سے بھی ہوگیا،اپریل 2018 میں دائر ہونے والی اپیلوں پر آج سماعت ہورہی ہے، دو سے تین ماہ میں تمام زیر التوا فوجداری اپیلیں نمٹا دینگے، تین ماہ بعد جو فوجداری اپیل آئے گی ساتھ ہی مقرر ہوجائے گی، چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے یہ ریمارکس پیر کو دوران سماعت دیئے ، دریں اثنا سپریم کورٹ نے گجرات کے رہائشی شمس الرحمن کی سزائے موت میں رہائی کے خلاف اپیل مسترد کر دی عدالت نے قراردیا ہے کہ استغاثہ ملزم شمس الرحمن کا جرم ثابت کرنے میں ناکام رہا شک کا فائدہ دیتے ہوئے ملزم کو رہا کیا جاتا ہے ۔

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے گجرات کے رہائشی شمس الرحمان کی رہائی کیخلاف اپیل پر سماعت کی عدالت نے ہائیکورٹ کا فیصلہ برقرار رکھتے ہوئے ڈاکٹر شمس الرحمان کی رہائی کیخلاف اپیل مسترد کر دی، عدالت نے کہا کہ استغاثہ جرم ثابت کرنے میں ناکام رہا,پوسٹ مارٹم رپورٹ میں بھی تاخیر کی گئی شک کا فائدہ دیتے ہوئے ملزم کو رہا کیا جاتا ہے،ڈاکٹر شمس الرحمان پر 2010 میں بیوی زوبیہ شاہین کو زہریلا انجکشن لگا کر قتل کرنے کا الزام تھا ٹرائل کورٹ نے ڈاکٹر شمس الرحمان کو سزائے موت سنائی تھی ہائیکورٹ نے ٹرائل کورٹ کا فیصلہ معطل کرتے ہوئے ملزم کی رہائی کا حکم دیا تھا ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف مقتولہ زوبیہ شاہین کی والدہ نے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔


ای پیپر