Who asked for NRO?
21 دسمبر 2020 (18:14) 2020-12-21

اسلام آباد :وزیر اطلاعات شبلی فراز نے اپوزیشن کو بے نقاب کرتے ہوئے کہا عوام کو پتہ ہونا چاہئے کہ این آر او کا پس منظر کیا ہے،اپوزیشن والے دعویٰ کرتے ہیں انہوں نےا ین آر او نہیں مانگا،اپوزیشن نے فیٹف بل پر قانون سازی کیلئے جو شرائط رکھیں وہ ان کے اپنےذاتی مفاد کیلئے تھا،فیٹف بل پر قائم پارلیمانی کمیٹی کا میں رکن تھا،اس کمیٹی میں تمام جماعتوں کی بھی نمائندگی شامل تھی ،حیران کن بات یہاں پر یہ ہے جب کمیٹی میں فیٹف بل پر بحث شروع ہوئی تو اپوزیشن نے سب سے پہلے نیب بل کا پوچھا ،حد تو یہ تھی اپوزیشن کے پارلیمانی رہنما نیب بل پر اجلاس چھوڑ کر چلے گئے،اپوزیشن ایسے قوانین میں تبدیلی چاہتی تھی جس کے بعد ساری کمائی حلال ہو جاتی تھی ۔

شبلی فراز کا کہنا تھا اپوزیشن نے نیب بل کی مجموعی 38 شقوں میں سے 34 پر ترامیم پیش کیں،اپوزیشن نے نیب قانون کی عملداری 1999 سے کرنے کا مطالبہ پیش کرنا شروع کردیا ،1999 کا مقصد یہ تھا جتنی کرپشن کی گئی تھی وہ ساری حلال ہو جاتی،اپوزیشن نے منی لانڈرنگ کو بطور جرم ہٹانے کی ترمیم پیش کی،اپوزیشن کی پہلی ترمیم مان لیتے تو ان کی کرپشن جائز ہو جاتی،دوسری ترمیم میں نیب ایک ارب رو پےسے کم کرپشن پر ایکشن نہیں لے سکتا تھا،چوتھی ترمیم بے نامی دار قانون سے اہلیہ اور بچوں کو باہر نکالنا تھا،اگر ایسا کرتے تو ترمیم سے شہبازشریف ، آصف زرداری فضل الرحمان کے خاندان کےا فراد محفوظ ہو جاتے،جان بوجھ کر دیوالیہ قراردینے کو بھی نیب قانون سے ہٹانے کا مطالبہ کیا گیا۔

شبلی فراز نے مزید کہا ان ترامیم سے مسلم لیگ (ن) کو این آر او مل جاتا،ساتویں ترمیم نیب قانون کے سیکشن 9 میں پیش کی گئی،اپوزیشن چاہتی تھی سپریم کورٹ کے حکم کے بغیر نااہلی نہ ہوسکے،مطلب مقدمےکو20،10سال چلاتےرہیں جب تک فیصلہ نہ ہونااہل نہ کیاجائے،،عوام نے پی ڈی ایم کو مسترد کردیا،اپوزیشن سیکشن 9 میں سے 5 شقوں کو ختم کرنےا ور ایک میں ترمیم پیش کرنا چاہتی تھی،جمہوری حکومت کو ہٹانے کیلئے غیر جمہوری ہتھکنڈے اپنائے گئے۔عدالت سےنااہلی کچھ کیسزمیں تاحیات اورکچھ میں 10سال ہوتی ہے، غیرجمہوری طریقےسےحکومت کوہٹانےکی باتیں کرتےہیں.

انہوں نے کہا اپوزیشن ریلیاں کرناچاہتی ہےکریں لیکن عوام کی صحت کاخیال رکھیں،کورونابہت بڑھ گیا ہے،ان لوگوں کو پتہ ہے عمران خان کیسزمیں ریلیف نہیں دےگا، کبھی جلسوں کی اورکبھی ریلی کی دھمکیاں دیتےہیں، عدالتوں نےموجودہ حالات میں جلسوں کوغیرقانونی قراردیا، سیاسی مستقبل بچانےکیلئےعوام کی جانوں کوداؤپرلگادیا،ان کاہرمیلہ ناکام ہوا،لاڑکانہ میلےمیں بھی ان کوندامت ہوگی، اپوزیشن چاہتی تھی کرپشن پرنااہلی کی سزاختم ہونی چاہیے، کرپٹ اورنااہل لوگوں کامقصد کرپشن بچانا ہے، اپوزیشن نےاداروں میں تقسیم پیداکرنےکی کوشش کی لیکن ان کا ہر حربہ ناکام ہوگا ۔


ای پیپر