مقبوضہ کشمیر میں ڈیڑھ کروڑ زندگیاں خطرے میں
21 اگست 2019 (17:57) 2019-08-21

اسلام آ باد : سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے امور کشمیر و گلگت بلتستان کو ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل نے آ گاہ کیا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بد ترین انسانی المیہ پید ہو گیا ہے، ڈیڑھ کروڑ لوگوں کی زندگیاں خطرے میں ہیں۔

ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر بریفنگ دیتے ہوئے آ گاہ کیاکہ جموں کشمیر میں ڈیڑھ کروڑ لوگوں کی زندگیاں خطرے میں ہیں۔سولہ دن سے لوگوں کو گھروں میں محصور کر دیا گیا ۔ہر گھر کے سامنے ایک فوجی کھڑا ہے ۔بھارتی فوج نے چار ہزار سے زائد لوگوں کو جیلوں میں منتقل کر دیا ہے ۔ہندوستان اس کو پلوامہ ٹو کرنا چاہ رہاہے ۔بھارت معاملے کو دہشتگردی سے جوڑنے کی کوشش کر رہاہے ۔لائن آف کنٹرول پر حالات بہت کشیدہ ہیں ۔روزانہ فائرنگ کی جا رہی ہے ہمارے کچھ جوان شہید ہوئے ۔پاک فوج نے بھرپور جواب دیا ہے کئی بھارتی فوجی ہلاک ہوئے ۔انسانی حقوق کونسل اور اوآئی سی وزرائے خارجہ میں معاملہ اٹھایا جائے گا ۔نیشنل سیکیورٹی کمیٹی کی روشنی میں سفارتی تعلقات محدود کیے ، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ سولہ دن سے لوگوں کو گھروں میں محصور کر دیا گیا ،ہر گھر کے سامنے بھارتی فوجی کھڑا ہے ،بھارتی فوج نے چار ہزار سے زائد لوگوں کو جیلوں میں منتقل کر دیا ہے ،ہندوستان اس کو پلوامہ ٹو کرنا چاہ رہاہے ،بھارت معاملے کو دہشتگردی سے جوڑنے کی کوشش کر رہاہے ،انسانی حقوق کونسل اور اوآئی سی وزرائے خارجہ میں معاملہ اٹھایا جائے گا ،نیشنل سیکیورٹی کمیٹی کی روشنی میں بھارت کے ساتھ سفارتی تعلقات محدود کیے ، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہیں ،سندھ طاس معاہدے پر اسٹیک ہولڈرز کا اجلاس بلایا ہے،اجلاس میں وزارت خارجہ، ارسا ،وزارت پاور ڈویڑن ،انڈس واٹر کمشنر شریک ہونگے،سندھ طاس معاہدے میں ورلڈ بینک ضامن ہے ، بھارت نے دریائے ستلج میں بغیر اطلاع پانی چھوڑا،جو کچھ مودی حکومت نے مقبو ضہ کشمیر میں کیا اس پر خود بھارت والے بھی پریشان ہیں ، لائن آف کنٹرول پر حالات بہت کشیدہ ہیں ،پاک فوج نے بھرپور جواب دیا ہے کئی بھارتی فوجی ہلاک ہوئے۔بد ھ کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے امور کشمیر و گلگت بلتستان کا اجلاس سینیٹر ساجد میر کی زیر صدارت ہوا۔


ای پیپر