Human Rights Watch, Report, ugly face, India, PM Modi, Hindu extremism
20 فروری 2021 (09:40) 2021-02-20

نیو دہلی: انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے اپنی رپورٹ میں بھارت کا گھناؤنا چہرہ ایک مرتبہ پھر دنیا کو دکھا دیا ۔ مودی سرکار نے ہندو انتہا پسندوں کو مسلمانوں سمیت تمام اقلیتوں پر حملے کرنے کی کھلی اجازت دے رکھی ہے۔

ہیومن رائٹس واچ کی رپورٹ کے مطابق بھارت میں اقلیتیں اور بالخصوص مسلمانوں کو نشانہ بنانے کے لیے سرکاری پالیسیاں بنائی گئی ہیں۔ مودی سرکار نے نے مسلمانوں سے امتیازی سلوک کی پالیسیاں بنا رکھیں ہیں۔ 23 فروری 2020 میں ہونے والے دہلی فسادات میں سرکاری سرپرستی میں مسلمانوں پر حملے کیے گئے جس میں 40 مسلمان شہید ہوئے۔

ہیومن رائٹس واچ کا کہنا ہے کہ 5 اگست 2019 میں مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت سلب کرکے انسانی حقوق کی بدترین پامالیاں کی گئیں۔ انسانی حقوق کی تنظیم نے نشاندہی کی کہ محض شک کی بنیاد پر گاؤ رکشکوں نے درجنوں مسلمانوں کو شہید کر دیا۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ اپنے سخت گیر نظریات پر مکمل عمل درآمد اور اقلیتوں کو نشانہ بنانے کے لیے بی جے پی حکومت نے عدلیہ اور پولیس سمیت سرکاری محکمے کو اپنی گرفت میں لے رکھا ہے۔ جس کے لیے ہندو اکثریت کو اہم نشستوں پر بٹھایا گیا ہے۔

ہیومن رائٹس واچ کا کہنا تھا کہ نا صرف مسلمان بلکہ دلت ، سکھ اور دیگر اقلیتیں بھی مودی سرکار کے اعتاب کا شکار ہیں۔


ای پیپر