پی ایس ایل تھری میں شریک ٹیموں کو کرپشن سے بچنے کے طریقے بتا دئیے گئے
20 فروری 2018 (18:27)

لاہور: پی ایس ایل تھری میں شریک ٹیموں کو کرپشن سے بچنے کا سبق یاد کرا دیا گیا۔گزشتہ برس دوسرے ایڈیشن میں فکسنگ تنازع سامنے آیا تھا، اس کو مدنظر رکھتے ہوئے اب سخت انتظامات کیے گئے ہیں،دبئی میں اینٹی کرپشن لیکچرز بھی دیے گئے ، ہر ٹیم کا الگ سیشن ہوا جس میں ان کے تمام آفیشلز بھی موجود تھے۔


تفصیلات کے مطابق پی سی بی اینٹی کرپشن اینڈ سیکیورٹی یونٹ کے سربراہ کرنل(ر)اعظم اور جی ایم لیگل سلمان نصیر نے کھلاڑیوں کو مشکوک عناصر سے دور رہنے، فکسنگ کے نقصانات اور سزاں پر بریفنگ دی۔ ٹیموں کا قیام 2 الگ ہوٹلز میں ہے، کراچی کنگز، پشاور زلمی،اسلام آباد یونائٹیڈ، کوئٹہ گلیڈی ایٹرزاور ملتان سلطانز ایک جبکہ لاہور قلندرز الگ ہوٹل میں ہے، ٹیموں کے فلورز پر مالکان تک کو جانے کی اجازت نہیں، پی سی بی آفیشلز بھی کام کی نوعیت بتا کر اجازت ملنے پر جا سکتے ہیں، کھلاڑیوں کی اونرز سے ملاقات کانفرنس روم میں ہوتی ہے، اگر کسی کا مہمان ملاقات کیلیے آئے تو اجازت لینے کے بعد لابی میں ملاقات کی جا سکتی ہے۔


اکتوبر میں سری لنکا سے سیریز کے دوران پاکستانی ٹیم کا قیام جس ہوٹل میں تھا اب پی ایس ایل کی 5 فرنچائزز بھی وہیں ٹھہری ہیں، سابقہ ہوٹل کے مقابلے میں یہ خاصا بہتر اور زیادہ رش بھی نہیں ہوتا، گزشتہ برس تک جس ہوٹل میں ٹیمیں رہیں وہاں ہر وقت لابی لوگوں سے بھری رہتی تھی، دبئی آمد کے بعد ہوٹل میں قائم خصوصی ڈیسک سے کھلاڑیوں اور ٹیم آفیشلز کو موبائل سمز بھی دی گئیں جس کا تمام تر ریکارڈ رکھا جائے گا۔ہر ٹیم کے ساتھ ایک، ایک اینٹیگریٹی آفیسر تعینات ہے جو سب پر نظر رکھے گا، اس کے لیے پاکستان کرکٹ بورڈ نے اشتہار دے کر ماہرین کا تقرر کیا ہے۔


ای پیپر