Chairman NAB, Senate committee, warrants, Saleem Mandviwalla
20 دسمبر 2020 (18:58) 2020-12-20

لاہور: ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سلیم مانڈوی والا نے کہا کہ چیئرمین نیب کمیٹی میں پیش نہیں ہوئے تو وارنٹ جاری ہو سکتے ہیں۔

ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سلیم مانڈوی والا نے کہا کہ نیب کے خلاف لمبی شکایات کی فہرست بن چکی ہے، نیب کی وجہ سے لوگ ملک چھوڑ کر چلے گئے، انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کی ناکامی ہے کہ نیب کے خلاف وقت پر ترامیم نہیں لائے۔

ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ سارے ادارے بند کرکے نیب کو انچارج بنا دیں۔ یہ کہتے ہیں ہم سے پلی بارگین کریں ورنہ کاروبار نہیں چلنے دیں گے، انہوں نے کہا کہ نیب اتنا ٹارچر کرتا ہے کہ لوگ بے بس ہو جاتے ہیں۔ نیب سوسائٹیوں میں بھی چلی گئی ، ہر کسی کو نوٹس آجاتا ہے۔

سلیم مانڈوی والا نے کہا کہ استعفے دینے کا فیصلہ سیاسی جماعتوں کا ہے ، اگر سیاسی جماعتیں صحیح سمجھتی ہیں تو ٹھیک ہو گا، استعفے پولیٹیکل سسٹم کے تحت ہیں، انہوں نے کہا کہ دنیا کی پارلیمنٹس میں عدم اعتماد ہوتا ہے ، استعفے انہونی بات نہیں۔

ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ سینیٹ الیکشن وقت پر ہوں گے ، کوئی تبدیلی نہیں ہوگی۔ انہوں نے واضح کیا کہ سینیٹ الیکشن کا شیڈول آئینی ترامیم کے بعد ہی تبدیل ہو سکتا ہے۔ میں نہیں سمجھتا حکومت اتنے کم وقت میں کچھ کرسکے گی ، حکومتی وزرا کہتے ہیں ہم اپوزیشن جماعتوں سے مذاکرات کرنا چاہتے ہیں۔

سلیم مانڈوی والا نے تبدیلی سرکار کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ سب چور ڈاکو ہیں کہنا صحیح نہیں، ہر کوئی چور نہیں ہوتا۔ سب چور اور ڈاکو ہیں تو پارلیمنٹ پوری کی پوری گھر چلی جائے۔

واضح رہے کہ حکومت نے پی ڈی ایم کو لانگ مارچ سے روکنے کے لیے قبل از وقت سینیٹ کے انتخابات کروانے کا فیصلہ کیا ہے۔


ای پیپر